میرے دورہ روس کے بعد باجوہ نے مجھ پر یوکرین حملے کی مذمت کے لیے دباؤ ڈالا، عمران خان

سابق وزیراعظم اور پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان نے انکشاف کیا کہ سابق آرمی چیف جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ نے ان سے یوکرین پر روسی حملے کی مذمت کرنے کو کہا۔

اپنے ویڈیو پیغام میں سابق وزیراعظم نے کہا کہ میں نے روسی صدر ولادیمیر پیوٹن سے سستے نرخوں پر تیل کی خریداری پر بات کی لیکن جب میں پاکستان واپس آیا تو چیف آف آرمی اسٹاف نے مجھ سے یوکرین پر روس کے حملے کی مذمت کرنے کو کہا۔

گزشتہ سال اپریل میں عدم اعتماد کے ذریعے اقتدار سے ہٹائے جانے والے عمران خان نے ویڈیو لنک کے ذریعے اپنے خطاب میں کہا کہ جب انہوں نے باجوہ کو اس معاملے میں بھارت کی طرح ’’غیر جانبدار‘‘ رہنے کا مشورہ دیا تھا لیکن چند دنوں کے بعد سابق آرمی چیف نے خود مذمت کرنا شروع کردی۔ روس مجھے بتائے بغیر۔

سابق وزیراعظم عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ بھارت کا مقبوضہ کشمیر یکطرفہ مسئلہ ہے، مغربی ممالک کی جانب سے کشمیر پر کوئی ردعمل نہیں آیا، ہمیں یوکرین روس تنازع میں پوزیشن لینے کا کہا گیا لیکن ہم نے غیر جانبدار رہنے کا فیصلہ کیا۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ “گریڈ 22 کے افسر نے ایک سیمینار کے دوران امریکہ کو خوش کرنے کے لیے خارجہ پالیسی کا بیان دیا۔” انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ واشنگٹن کو خوش کرنے کے لیے فیصلے کیے گئے تو ملک کو نتائج بھگتنا پڑیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ کو منانے کی کوشش میں، دہشت گردی کے خلاف جنگ میں 80,000 لوگ مارے گئے۔

پی ڈی ایم حکومت اور الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) پر طنز کرتے ہوئے پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ آئین کے مطابق پنجاب اور خیبرپختونخوا اسمبلیوں کی تحلیل کے بعد 90 دن کے اندر انتخابات کرانا ضروری ہے لیکن یہ لوگ کر رہے ہیں۔ نئے بہانے”

واضح رہے کہ عمران خان نے آج سے قبل 90 روز میں انتخابات نہ ہونے کی صورت میں آئین بچاؤ تحریک شروع کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

کوئی امریکی سازش نہیں۔
10 فروری (سیاست ڈاٹ کام) سابق وزیراعظم اور پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ عمران خان نے کہا کہ ان کی حکومت کو ہٹانے کی کوئی امریکی سازش نہیں ہے۔

عمران خان نے کہا کہ سابق آرمی چیف نے تسلیم کیا ہے کہ “حکومت کی تبدیلی” کے اقدام کے پیچھے ان کا ہاتھ تھا جس کی وجہ سے ان کی حکومت ہٹائی گئی۔

چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان نے کہا کہ امریکا سپر پاور اور ہمارا سب سے بڑا تجارتی پارٹنر ہے، جو باتیں سامنے آرہی ہیں ان سے واضح ہے کہ مجھے نکالنے میں امریکا کا کوئی ہاتھ نہیں تھا، وزیراعظم کے عہدے سے ہٹانے کا منصوبہ تھا۔ یہاں سے امریکہ کو برآمد کیا جاتا ہے۔ پاکستان کے عوام کے مفاد میں امریکہ کے ساتھ اچھے تعلقات ہیں۔

پہلے عمران خان نے اپنی برطرفی کا الزام امریکہ پر لگایا، بعد میں وہ سابق آرمی چیف پر الزام لگانا شروع کر دیتے ہیں، اور پھر انہوں نے یہ الزام بھی لگایا کہ پنجاب کے نگراں وزیر اعلیٰ محسن نقوی بھی ’’حکومت کی تبدیلی‘‘ آپریشن میں ملوث تھے۔

Author

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں