حکومت نے آئی ایم ایف کی شرائط پر پورا اترنے کے لیے ’منی بجٹ‘ قومی اسمبلی میں پیش کردیا۔

وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے ڈیفالٹ سے بچنے کے لیے درکار قرض پروگرام کی منظوری کے لیے آئی ایم ایف کی شرائط کو پورا کرنے کے لیے فنانس بل (ضمنی) “منی بجٹ” قومی اسمبلی میں پیش کیا۔

پارلیمنٹ سے خطاب کے دوران وزیر خزانہ نے ن لیگ اور پی ٹی آئی کی سابقہ حکومتوں کی کارکردگی کا موازنہ کیا۔

وزیر خزانہ نے جنرل سیلز ٹیکس جی ایس ٹی کی شرح 17 سے بڑھا کر 18 فیصد کرنے اور سگریٹ اور تمباکو پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی (ایف ای ڈی) میں اضافے کا بھی اعلان کیا تاکہ پاکستان کی جانب سے 170 ارب روپے میں سے 115 ارب روپے اضافی حاصل کیے جا سکیں۔ آئی ایم ایف کی شرائط۔

چھوٹے بجٹ کی تجاویز

  • حکومت نے لگژری آئٹمز پر جی ایس ٹی 17 فیصد سے بڑھا کر 25 فیصد کر دیا
  • سگریٹ اور فزی ڈرنکس پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی میں اضافہ۔
  • سیمنٹ پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی میں اضافہ
  • جی ایس ٹی 17 فیصد سے بڑھا کر 18 فیصد کر دیا گیا ہے۔
  • بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام (BISP) کے ہینڈ آؤٹ 360 ارب روپے سے بڑھ کر 400 ارب روپے ہو گئے
  • بزنس اور فرسٹ کلاس ہوائی ٹکٹوں پر ایف ڈی ای اب 20,000 روپے یا 50% ہوگی – جو بھی زیادہ ہو
  • ضروری اشیاء پر جی ایس ٹی نہیں لگایا جانا ہے۔

وزارت خزانہ کے معتبر ذرائع نے بتایا کہ وہ توقع کرتے ہیں کہ بل جمعرات کی صبح تک چڑھ جائے گا، جس سے نہ صرف آئی ایم ایف کی رقم بلکہ کثیر الجہتی اور دو طرفہ فنڈز کی راہ ہموار ہوگی۔

تازہ ترین تفصیلات کے مطابق بل کو ایوان بالا میں پیش کرنے کے لیے سینیٹ کا اجلاس بھی طلب کر لیا گیا ہے۔ دونوں ایوانوں سے فنانس بل کی منظوری کے بعد بل کو منظوری کے لیے صدر مملکت عارف علوی کو بھیجا جائے گا۔

صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے منی بجٹ پر اعتراضات اٹھائے جس کے بعد وفاقی حکومت نے فنانس بل پارلیمنٹ سے منظور کرانے کا فیصلہ کیا۔

اجلاس کے بعد ایوان صدر سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا کہ صدر نے مشورہ دیا کہ اس اہم موضوع پر پارلیمنٹ کو اعتماد میں لینا زیادہ مناسب ہوگا اور فوری طور پر اجلاس بلایا جائے تاکہ بل کو بلاتاخیر نافذ کیا جاسکے۔

قبل ازیں وفاقی حکومت نے 170 ارب روپے کے منی بجٹ میں سے 115 ارب روپے اکٹھے کرنے کے لیے فوری طور پر سگریٹ پر ٹیکس میں اضافہ کیا۔

فیڈرل بورڈ آف ریونیو کی جانب سے نوٹیفکیشن جاری

ایف بی آر کے جاری کردہ نوٹیفکیشن کے مطابق جنرل سیلز ٹیکس (جی ایس ٹی) کی معیاری شرح 17 سے بڑھا کر 18 فیصد کر دی گئی ہے جس کا اطلاق 15 فروری 2023 سے ہو گا۔ سگریٹ پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی (ایف ای ڈی) بھی بڑھ گئی ہے۔

حکومت نے مہنگے برانڈز پر ایف ای ڈی 6.5 روپے فی سگریٹ سے بڑھا کر 153 فیصد اضافے سے 16.5 روپے کر دی ہے۔ کم مہنگے برانڈز کے لیے، فی اسٹک اضافہ 2.55 روپے سے 5.05 روپے تک ہے – 98 فیصد کا اضافہ۔

50% LikesVS
50% Dislikes

Author

  • Muhammad Amir

    Muhammad Amir is working with Burj News as Senior Writer

    https://urdu.burjnews.com/author/mamirsalarzai/ mamirsalarzai@urdu.burjnews.com Amir Muhammad

اپنا تبصرہ بھیجیں