ترکی کی حکومت نے استنبول بم حملے پر امریکی تعزیت کو مسترد کر دیا۔

ترکی کی حکومت نے پیر کے روز استنبول میں بم حملے میں چھ افراد کی ہلاکت پر امریکی تعزیت کو مسترد کر دیا جس کا الزام انقرہ نے ایک کالعدم کرد عسکریت پسند گروپ پر لگایا تھا۔

صدر رجب طیب اردگان اکثر واشنگٹن پر شمالی شام میں کرد جنگجوؤں کو ہتھیار فراہم کرنے کا الزام لگاتے ہیں، جنھیں انقرہ “دہشت گرد” تصور کرتا ہے۔

“ہم امریکی سفارت خانے کے تعزیتی پیغام کو قبول نہیں کرتے۔ ہم اسے مسترد کرتے ہیں،” وزیر داخلہ سلیمان سویلو نے ٹیلی ویژن پر تبصرے میں کہا۔

نیویارک ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق اتوار کو استنبول کے معروف تجارتی ایونیو پر ہونے والے مہلک دھماکے نے ٹویٹر پر غصے کو جنم دیا جب کہ سوشل میڈیا سائٹ کے صارفین کی جانب سے ترکی کے لوگوں کے ساتھ اظہار ہمدردی کے بجائے شہر کے سیاحتی علاقے پر توجہ مرکوز کی گئی۔

اس سے قبل، سویلو نے کہا کہ کردستان ورکرز پارٹی (PKK) اور شامی کرد YPG ملیشیا، جس کے بارے میں انقرہ کا کہنا ہے کہ PKK کا ایک ونگ ہے، اتوار کو تاریخی اور ہلچل سے بھرپور استقلال ایونیو پر حملے کے ذمہ دار تھے۔

سویلو نے کہا کہ یہ حکم کوبانی میں دیا گیا تھا اور بمبار شمالی شام کے دونوں شہروں عفرین سے گزرا جہاں حالیہ برسوں میں ترک افواج نے YPG کے خلاف کارروائیاں کی ہیں۔

ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے اس بم دھماکے کو ایک ’’ناگوار حملہ‘‘ قرار دیا جس سے ’’دہشت کی بو‘‘ تھی۔

اس حملے میں ہلاک ہونے والوں میں ایک نو سالہ لڑکی اور اس کے والد کے ساتھ ساتھ ایک 15 سالہ لڑکی اور اس کی ماں بھی شامل ہیں۔

استنبول پولیس نے پیر کو بتایا کہ مجموعی طور پر 46 افراد کو حراست میں لیا گیا ہے۔ اردگان کی حکومت نے PKK پر الزام عائد کیا کہ صدر کے جی 20 سربراہی اجلاس کے لیے انڈونیشیا کے تفریحی جزیرے بالی پر پہنچنے سے کچھ دیر قبل یہ دھماکہ کیا گیا تھا۔

ترک میڈیا کے ساتھ شیئر کی جانے والی پولیس فوٹیج میں جامنی رنگ کی سویٹ شرٹ میں ملبوس ایک نوجوان خاتون کو استنبول کے ایک فلیٹ میں پکڑا گیا ہے۔

وزیر داخلہ سلیمان سویلو نے پیر کی صبح سرکاری انادولو نیوز ایجنسی کی طرف سے نشر کیے گئے ایک بیان میں کہا کہ بم نصب کرنے والے شخص کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

Author

  • Muhammad Amir

    Muhammad Amir is working with Burj News as Senior Writer

    https://urdu.burjnews.com/author/mamirsalarzai/ mamirsalarzai@urdu.burjnews.com Amir Muhammad

اپنا تبصرہ بھیجیں