اسلام آباد کی پبلک اور پرائیویٹ یونیورسٹیوں میں انٹرن شپ کو لازمی قرار دینے کا بل سینیٹ میں منظور

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے فیڈرل ایجوکیشن اینڈ پروفیشنل ٹریننگ نے منگل کو “فیڈرل یونیورسٹی ترمیمی بل 2022” منظور کر لیا۔

اطلاعات کے مطابق قائمہ کمیٹی کا اجلاس عرفان صدیقی کی زیر صدارت ہوا۔

اس موقع پر بحث کرتے ہوئے بل کی تحریک کرنے والی سینیٹر سیمی ایزدی نے کمیٹی کو آگاہ کیا کہ بنیادی مقصد وفاقی علاقے میں واقع تمام سرکاری اور نجی یونیورسٹیوں کے لیے انٹرن شپ کو نصاب کا لازمی حصہ بنانا ہے۔

کمیٹی نے سینیٹر بہرامند خان تنگی کی جانب سے بہاؤالدین زکریا یونیورسٹی میں لاء کے طلباء کو درپیش امتحانات کے حوالے سے اٹھائے گئے معاملے پر غور کیا۔

بہاؤالدین زکریا یونیورسٹی کے وائس چانسلر منصور اکبر کنڈی نے کمیٹی کو آگاہ کیا کہ یہ معاملہ زیر سماعت ہے اور یونیورسٹی معاملے کا فیصلہ ہونے تک کوئی تاریخ دینے سے قاصر ہے۔ وزارت قانون کے حکام نے کہا کہ دوسرے اور تیسرے سال کے طلباء کے امتحانات کے لیے ایسی کوئی بار نہیں ہے اور یہ بار صرف سال اول کے سپلیمنٹری طلباء تک محدود ہے۔

اس کے علاوہ علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کے وائس چانسلر کی جانب سے سینیٹ کمیٹی کو یونیورسٹی کی ذمہ داریوں، انتظامی کنٹرول، فیکلٹی اور فیس اسٹرکچر کے حوالے سے بھی بریفنگ دی گئی۔ ڈاکٹر ضیاء القیوم نے کمیٹی کو آگاہ کیا کہ ایچ ای سی کی جانب سے دو سالہ بی اے پروگرام کی بندش کے باوجود یونیورسٹی خود کفیل ہے جس میں یونیورسٹی سالانہ 0.15 ملین طلباء کو داخلہ دیتی ہے۔

چیئرمین کمیٹی کا کہنا تھا کہ پالیسی کو دھیرے دھیرے نافذ نہیں کیا جانا چاہیے بلکہ اسے بتدریج نافذ کیا جانا چاہیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جو پالیسی 150,000 طلباء کو سپیکٹرم سے باہر کرتی ہے وہ پالیسی بھی نہیں ہے اور انہوں نے وزارت کو مشورہ دیا کہ وہ اس سلسلے میں HEC اور AIOU کے ساتھ رابطہ قائم کرے اور 15 دن کے اندر رپورٹ پیش کرے۔

چیئرمین نے ایچ ای سی کے حکام کو یہ بھی ہدایت کی کہ وہ رپورٹ پیش کریں کہ اے آئی یو کو فنڈز کیوں فراہم نہیں کیے جا رہے ہیں۔ انہوں نے وائس چانسلر سے کہا کہ وہ آئندہ اجلاس میں بی اے پروگرام کی فیس میں اچانک 9000 روپے سے بڑھا کر 19000 روپے کرنے کے بارے میں کمیٹی کو مطمئن کریں۔

اجلاس میں سینیٹرز اعجاز احمد چوہدری، جام مہتاب حسین ڈہر، انجینئر رخسانہ زبیری، رانا مقبول احمد، مولوی فیض محمد، سیمی ایزدی، بہرامند خان تنگی، اور پروفیسر ڈاکٹر مہر تاج روغانی کے علاوہ عامر اشرف خواجہ سیکرٹری داخلہ نے شرکت کی۔ وفاقی تعلیم اور پیشہ ورانہ تربیت کی وزارت، BZU کے وائس چانسلر منصور اکبر کنڈی، AIOU کے وائس چانسلر ڈاکٹر۔ ضیاء القیوم اور دیگر متعلقہ افسران۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں