قطر کی حکومت نے معروف اسکالر ڈاکٹر ذاکر نائیک کو فیفا ورلڈ کپ 2022 کے دوران ’اسلام‘ کی تبلیغ کی دعوت دی ہے۔

سب کی نظریں قطر میں ہونے والے معروف فٹ بال ٹورنامنٹ پر ہیں اور مشہور اسلامی اسکالر ڈاکٹر ذاکر نائیک بھی سرخیوں میں ہیں کیونکہ انہیں فیفا ورلڈ کپ کے سائیڈ لائن ایونٹس میں تقریر کرنے کے لیے مدعو کیا گیا تھا۔

قطر کے سرکاری اسپورٹس چینل کے ایک پریزینٹر نے ڈاکٹر ذاکر کا کلپ شیئر کرتے ہوئے کہا کہ “مبلغ شیخ ذاکر نائیک ورلڈ کپ کے دوران قطر میں موجود ہیں اور پورے ٹورنامنٹ میں بہت سے مذہبی لیکچر دیتے ہیں۔”

سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ایک ویڈیو میں دیکھا گیا ہے کہ قطر میں اسلامی مبلغ ڈاکٹر ذاکر نائیک کے لیکچر کے دوران چار افراد نے اسلام قبول کیا۔ قطر نے ذاکر نائیک کو فیفا ورلڈ کپ 2022 کے موقع پر تبلیغ اسلام کے لیے مدعو کیا ہے۔ وہ ورلڈ کپ ٹورنامنٹ کے دوران خطبہ اور لیکچر دیں گے اور سوشل میڈیا پر متعدد پوسٹس کی اطلاع دیں گے۔

قطر میں ڈاکٹر ذاکر نائیک کے استقبال کی تصویر بھی سوشل میڈیا پر وائرل ہوگئی۔

بھارتی مبلغ، ذاکر نائیک، فی الحال 2017 سے ملائیشیا میں جلاوطنی کی زندگی گزار رہے ہیں جب نریندر مودی کی قیادت والی بھارتی حکومت نے ان کے خلاف منی لانڈرنگ اور دہشت گردی کی مالی معاونت کے جھوٹے الزامات عائد کیے تھے۔

گراؤنڈز میں ورلڈ کپ کے شائقین کے لیے شراب پر پابندی کے علاوہ، قطر نے پیس ٹی وی کے میزبان کو دنیا کے سب سے باوقار ٹورنامنٹ کے درمیان مختلف تقریبات میں تقریر کرنے کی دعوت دی۔

بتایا گیا کہ مذہب کو عام کرنے کے لیے کئی اسلامی اقوال بھی دکھائے گئے جو اپنے پسندیدہ کھلاڑیوں کی حرکتیں دیکھنے کے لیے پوری دنیا سے عرب قوم آتے تھے۔

یہاں ایک بات یاد رکھیں کہ قطر ایک اسلامی ریاست ہے اور اس کے قواعد و ضوابط بہت سخت ہیں اسی کو مدنظر رکھتے ہوئے عرب ملک میں ایک تقریب شروع کی گئی ہے اور امن و امان کو برقرار رکھنے کے لیے قطر نے غیر اخلاقی لباس پہننے اور شراب کی دستیابی پر پابندی عائد کردی ہے۔ فیفا ورلڈ کپ 2022 کے میچز۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں