آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اور ان کے خاندان کے اثاثوں سے متعلق دعوے سراسر جھوٹ ہیں، آئی ایس پی آر کا بیان جاری

پاک فوج کے میڈیا ونگ آئی ایس پی آر نے سبکدوش ہونے والے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اور ان کے اہل خانہ کے اثاثوں سے متعلق سوشل میڈیا پر کیے جانے والے دعوؤں کی تردید کرتے ہوئے انہیں ’سانحہ جھوٹ‘ قرار دیا۔

آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اور ان کے اہل خانہ کے اثاثوں سے متعلق گمراہ کن ڈیٹا سوشل میڈیا پر شیئر کیا گیا ہے۔ فوج کے میڈیا ونگ نے اتوار کو جاری کردہ ایک بیان میں کہا کہ یہ گمراہ کن اعداد و شمار مبالغہ آرائی اور مفروضے پر مبنی ہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ایک مخصوص گروہ نے بہت “چالاکی اور بے ایمانی” سے جنرل باجوہ کی بہو کے والد اور خاندان کے اثاثوں کو آرمی چیف اور ان کے خاندان سے جوڑ دیا ہے۔

“ایک غلط تاثر پیدا کیا جا رہا ہے کہ یہ اثاثے آرمی چیف جنرل باجوہ کے خاندان نے ان کے چھ سالہ دور میں بنائے تھے۔ یہ سراسر جھوٹ ہے، جو صریح جھوٹ اور بددیانتی پر مبنی ہے،‘‘ بیان میں کہا گیا۔

ملٹری کے میڈیا ونگ نے یقین دہانی کرائی کہ آرمی چیف، ان کی اہلیہ اور اہل خانہ کے تمام اثاثے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کو ظاہر کر دیے گئے ہیں۔

آرمی چیف اور ان کے اہل خانہ باقاعدگی سے ٹیکس ریٹرن فائل کرتے ہیں۔ ہر شہری کی طرح آرمی چیف اور ان کا خاندان اپنے اثاثوں کے لیے ٹیکس حکام کو جوابدہ ہے۔

اس ہفتے کے شروع میں، وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے جنرل باجوہ کے خاندان کے افراد کی ٹیکس معلومات کے “غیر قانونی اور غیر ضروری” لیک ہونے کا نوٹس لیا۔

“یہ واضح طور پر ٹیکس کی معلومات کی مکمل رازداری کی خلاف ورزی ہے جو قانون فراہم کرتا ہے،” فنانس ڈویژن کے ایک بیان میں پڑھا گیا تھا۔ آج تک کے نامعلوم اہلکاروں کی جانب سے اس سنگین کوتاہی کو دیکھتے ہوئے، ڈار نے وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے ریونیو طارق محمود پاشا کو ہدایت کی تھی کہ وہ ذاتی طور پر تحقیقات کی قیادت کریں، ذمہ داری کا تعین کریں اور 24 گھنٹے کے اندر رپورٹ پیش کریں۔

یاد رہے کہ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اپنے 6 سالہ دور کے بعد 29 نومبر کو ریٹائر ہو رہے ہیں، ان کی کمانڈ کی تبدیلی کی تقریب 29 نومبر 2022 کو جی ایچ کیو میں ہوگی جہاں آرمی چیف جنرل باجوہ باضابطہ طور پر پاک فوج کی کمان نئے تعینات ہونے والے سی او اے ایس کے حوالے کریں گے۔ جنرل منیر۔

50% LikesVS
50% Dislikes

Author

  • Muhammad Amir

    Muhammad Amir is working with Burj News as Senior Writer

    https://urdu.burjnews.com/author/mamirsalarzai/ mamirsalarzai@urdu.burjnews.com Amir Muhammad

اپنا تبصرہ بھیجیں