جنرل (ر) باجوہ کو توسیع دینا سب سے بڑی غلطی تھی، اسد قیصر

قومی اسمبلی کے سابق سپیکر اور پی ٹی آئی رہنما اسد قیصر نے اعتراف کیا کہ اس وقت کے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی مدت ملازمت میں توسیع ان کی حکومت کی ایک غلطی اور “غلط فیصلہ” تھا۔

ایک مقامی ٹی وی چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے، قیصر نے کہا کہ “ہر کسی کو [پارٹی کی صفوں میں] غلطی پر افسوس ہے۔ حالات جیسے بھی تھے، غلطی ہو گئی تھی۔‘‘

جنرل قمر جاوید باجوہ 28 نومبر 2019 کو ریٹائر ہونے والے تھے لیکن اس وقت کے وزیر اعظم عمران خان نے 19 اگست کو سی او اے ایس کے طور پر ان کی مدت ملازمت میں تین سال کی توسیع کی منظوری دے دی – اس سے صرف تین ماہ قبل انہوں نے اعلیٰ فوجی عہدے کو الوداع کیا۔

دریں اثناء جنرل باجوہ کی مدت ملازمت میں توسیع کو سپریم کورٹ میں چیلنج کر دیا گیا۔ بعد ازاں درخواست گزار نے عدالت سے استدعا کی کہ وہ اپنی درخواست واپس لینا چاہتے ہیں تاہم اس وقت کے چیف جسٹس پاکستان آصف سعید کھوسہ نے درخواست مسترد کرتے ہوئے کیس کو ازخود نوٹس میں تبدیل کرتے ہوئے کہا کہ یہ معاملہ عوام کے دائرہ اختیار میں ہے۔ دلچسپی.

نومبر 2019 میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے ایک مختصر حکم میں اعلان کیا کہ جنرل قمر جاوید باجوہ مزید چھ ماہ تک اپنے عہدے پر برقرار رہیں گے۔ عدالت عظمیٰ نے پارلیمنٹ سے آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع پر قانون سازی کرنے کو بھی کہا تھا۔

جنرل (ر) باجوہ کی مدت ملازمت میں توسیع کا نوٹیفکیشن بالآخر 28 جنوری 2020 کو جاری کیا گیا، جب پارلیمنٹ نے آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع سے متعلق معاملے کو حل کرنے کے لیے ایک قانون منظور کیا۔

توسیع تمام سیاسی جماعتوں کا “اجتماعی فیصلہ” تھا۔ جب اس فیصلے کے پس منظر میں ہونے والی بات چیت کے بارے میں پوچھا گیا تو، قیصر نے کہا، “یہ غلط فیصلہ تھا، اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ یہ کیوں اور کیسے لیا گیا تھا۔”

پی ٹی آئی رہنما نے مزید کہا کہ سیاسی جماعتیں خاندان بن چکی ہیں جن کی عوام میں جڑیں نہیں ہیں۔

حکومت کے ساتھ مذاکرات کے لیے عمران خان کی مشروط پیشکش پر تبصرہ کرتے ہوئے قیصر نے کہا کہ اگر قبل از وقت انتخابات ایجنڈے کا حصہ ہیں تو وہ مذاکرات کے لیے تیار ہیں۔

ایک نجی ٹی وی چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے پی ٹی آئی سربراہ نے یہ بھی اعتراف کیا کہ سابق آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع درست فیصلہ نہیں تھا۔ انہوں نے اس فیصلے کو اپنی “سب سے بڑی غلطی” قرار دیا۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں