برطانیہ، اٹلی اور جاپان ایک نیا فائٹر جیٹ تیار کریں گے۔

برطانیہ کے وزیر اعظم رشی سنک نے مصنوعی ذہانت کا استعمال کرنے والا ایک نیا لڑاکا طیارہ تیار کرنے کے لیے برطانیہ، اٹلی اور جاپان کے درمیان تعاون کا اعلان کیا۔

وزیراعظم کا کہنا ہے کہ مشترکہ منصوبے کا مقصد برطانیہ میں ہزاروں ملازمتیں پیدا کرنا اور سیکیورٹی تعلقات کو مضبوط بنانا ہے۔ قومیں اگلی نسل کا لڑاکا طیارہ تیار کریں گی – 2030 کے وسط میں سروس میں داخل ہونے کی وجہ سے – جو بالآخر ٹائفون جیٹ کی جگہ لے لے گا۔

امید ہے کہ نیا ٹیمپیسٹ جیٹ جدید ترین ہتھیار لے جائے گا۔

برطانیہ کے وزیر اعظم رشی سنک نے جمعہ کو لنکن شائر میں آر اے ایف کنگزبی کا دورہ کرتے ہوئے کہا کہ شراکت داری “ملک کو نئے خطرات سے محفوظ رکھے گی”۔ انہوں نے کہا: “ہم دنیا کے ان چند ممالک میں سے ایک ہیں جو تکنیکی طور پر جدید لڑاکا طیارے بنانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔”

اسے تیار کرنے پر کام پہلے سے ہی جاری ہے – جس کا مقصد ایک ایسا لڑاکا طیارہ بنانا ہے جو اسپیڈ سٹیلتھ فراہم کرے گا، اور انسانی پائلٹ کی مدد کے لیے جدید سینسرز اور حتیٰ کہ مصنوعی ذہانت کا استعمال کرے گا جب وہ مغلوب ہوں، یا انتہائی دباؤ میں ہوں۔

ضرورت پڑنے پر اسے پائلٹ کے ان پٹ کے بغیر بھی اڑایا جا سکتا ہے اور یہ ہائپر سونک میزائل فائر کرنے کے قابل بھی ہو سکتا ہے۔ لیکن اس طرح کے پیچیدہ طیارے کی تعمیر انتہائی مہنگی ہے – F35 جیٹ کو تیار کرنا پینٹاگون کا اب تک کا سب سے مہنگا پروگرام تھا۔ شراکت داروں کے لیے

اٹلی پہلے ہی اس میں شامل تھا، اور جاپان کا اضافہ ایک اہم اقدام ہے – ایک ایسے وقت میں جب برطانیہ انڈو پیسیفک خطے میں اپنے اتحادیوں کے ساتھ قریبی تعلقات استوار کر رہا ہے اور چین کے بارے میں فکر مند ہے۔

دوسرے ممالک اب بھی اس پروگرام میں شامل ہو سکتے ہیں۔ فرانس، جرمنی اور اسپین پہلے ہی اپنے الگ الگ ڈیزائن پر مل کر کام کر رہے ہیں – جیسا کہ امریکہ ہے۔

برطانیہ کے لیے یہ معاہدہ صرف سیکیورٹی سے متعلق نہیں بلکہ معاشیات سے بھی متعلق ہے۔ امید یہ ہے کہ ایک نیا لڑاکا طیارہ تیار کرنے سے برطانیہ میں ہزاروں ملازمتیں پیدا ہوں گی اور اس کو برقرار رکھا جائے گا اور اسلحے کی مزید برآمدات کے دروازے کھل جائیں گے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

Author

  • Muhammad Amir

    Muhammad Amir is working with Burj News as Senior Writer

    https://urdu.burjnews.com/author/mamirsalarzai/ mamirsalarzai@urdu.burjnews.com Amir Muhammad

اپنا تبصرہ بھیجیں