آسٹریلوی حکومت نے انسانی حقوق کی خلاف ورزی پر ایران اور روس پر پابندیاں عائد کر دی۔

آسٹریلیا کے وزیر خارجہ نے کہا کہ حکومت روس اور ایران پر انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کے جواب میں پابندیاں عائد کرے گی۔

وزیر خارجہ پینی وونگ نے ایک بیان میں کہا کہ آسٹریلیا 13 افراد اور دو اداروں پر میگنیٹسکی طرز کی پابندیاں عائد کر رہا ہے، جن میں ایران کی مورالٹی پولیس اور بسیج ریزسٹنس فورس شامل ہے، اور 22 سالہ نوجوان کی ہلاکت کے بعد شروع ہونے والے مظاہروں کے خلاف کریک ڈاؤن میں ملوث چھ ایرانی شامل ہیں۔ ماہا امینی ستمبر میں حراست میں ہیں۔

سڈنی مارننگ ہیرالڈ کے لیے رائے شماری میں، وونگ نے کہا کہ پابندیوں کا اطلاق سید صادق حسینی پر ہوتا ہے، جنہیں اس نے ایران کے اسلامی انقلابی گارڈ کور کے ایک سینئر کمانڈر کے طور پر بیان کیا۔ اسے “مظاہرین کے خلاف تشدد کے اندھا دھند استعمال” میں ان کے مبینہ کردار کے لیے درج کیا جا رہا تھا۔

وونگ نے ہفتے کے روز اخبار میں لکھا، “ایرانی حکومت کی اپنے ہی لوگوں کے انسانی حقوق کے لیے واضح اور وسیع پیمانے پر نظر اندازی نے آسٹریلوی باشندوں کو خوفزدہ کر دیا ہے، اور قصورواروں کو جوابدہ ہونا چاہیے۔”


وونگ نے معاون وزیر خارجہ ٹم واٹس کے ساتھ جاری کردہ اپنے بیان میں کہا کہ وزیر خارجہ نے سابق اپوزیشن لیڈر الیکسی ناوالنی کے قتل کی کوشش میں ملوث سات روسیوں پر بھی انسانی حقوق کی پابندیاں عائد کیں۔

انسانی حقوق کی پابندیوں کے علاوہ، وونگ نے کہا کہ آسٹریلیا یوکرین کے خلاف استعمال کرنے کے لیے روس کو ڈرون فراہم کرنے پر تین ایرانیوں اور ایک ایرانی کاروبار پر مزید ہدفی مالی پابندیاں لگا رہا ہے۔

“روس کو ڈرون کی فراہمی اس بات کا ثبوت ہے کہ ایران عالمی سلامتی کو غیر مستحکم کرنے میں کردار ادا کر رہا ہے۔ یہ فہرست اس بات پر روشنی ڈالتی ہے کہ جو لوگ روس کو مادی مدد فراہم کرتے ہیں انہیں نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا،‘‘ انہوں نے کہا۔

یہ اعلان صدر ولادیمیر پوتن کی جانب سے یوکرین کے چار علاقوں کے الحاق کا اعلان کرنے کے بعد اکتوبر میں آسٹریلیا کی سینٹرل لیفٹ لیبر حکومت کی جانب سے روس کے مقرر کردہ 28 علیحدگی پسندوں، وزراء اور اعلیٰ عہدیداروں پر ہدفی مالی پابندیاں اور سفری پابندیاں عائد کرنے کے بعد سامنے آیا ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

Author

  • Muhammad Amir

    Muhammad Amir is working with Burj News as Senior Writer

    https://urdu.burjnews.com/author/mamirsalarzai/ mamirsalarzai@urdu.burjnews.com Amir Muhammad

اپنا تبصرہ بھیجیں