برطانیہ کی ڈیلی میل کی معافی ہماری بے گناہی کا ثبوت ہے، مسلم لیگ ن کے سپریمو نواز شریف

مسلم لیگ ن کے قائد نواز شریف نے ایک انٹرویو میں کہا کہ ڈیلی میل کی معافی ان کی بے گناہی کا ثبوت ہے اور پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان اور پارٹی کے سینئر رہنما شہزاد اکبر کو اب شرم سے سر جھکا لینا چاہیے۔

مسلم لیگ (ن) کے بانی، جو 2019 سے لندن میں ہیں، نے مزید کہا کہ برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی (این سی اے) پہلے ہی مناسب تندہی کے بعد شہباز شریف کو ’کلین چٹ‘ دے چکی ہے۔

نواز نے مزید کہا کہ برطانیہ میں مسلم لیگ (ن)، پی ٹی آئی یا کسی دوسری پاکستانی سیاسی جماعت کی حکومت نہیں تھی اور یہ ایک آزاد اور منصفانہ عدالتی نظام کے ساتھ جمہوری ریاست ہے۔ نواز شریف نے کہا کہ ایسے ملک کی عدالت کسی کو کلین چٹ دے کر بے گناہی کا اس سے بڑا ثبوت نہیں ہو سکتا۔

سابق وزیراعظم نے مزید کہا کہ ڈیلی میل کی معافی کے بعد عمران خان اور شہزاد اکبر کو شرم سے سر جھکا لینا چاہیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان لوگوں نے ملک کو بیرون ملک بدنام کیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ سابق ججز شوکت صدیقی اور ارشد ملک کے بیانات، سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی آڈیو لیک اور اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) کی جانب سے مریم نواز کے خلاف فیصلے کو کالعدم قرار دینا ان کی بے گناہی کا ثبوت ہے۔

دوسری جانب انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان پر کرپشن کے الزامات ثابت ہو گئے۔ “توشہ خانہ سکینڈل کے بارے میں سب جانتے ہیں،” انہوں نے مزید کہا۔

نواز شریف نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایک مصدقہ کرپٹ شخص ان لوگوں پر کرپشن کے الزامات لگا رہا ہے جو قومی اور بین الاقوامی عدالتوں میں بے گناہ ثابت ہو چکے ہیں۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنما نے کہا کہ 90 کی دہائی میں ان کے خلاف ہائی جیکنگ کا جعلی مقدمہ درج ہونے کے بعد انہیں جلاوطنی پر مجبور کیا گیا اور 220 ملین عوام کے منتخب وزیر اعظم کو ان کے بیٹے سے 10 ہزار ریال کی ادائیگی نہ کرنے پر نااہل قرار دیا گیا۔

نواز شریف نے کہا کہ 2017 تک ملک ترقی کر رہا تھا، مہنگائی کنٹرول میں تھی۔ انہوں نے مزید کہا کہ مسلم لیگ ن کی حکومت نے ملکی معیشت کو فروغ دیا اور صرف تین سال میں لوڈشیڈنگ ختم کر دی۔

انہوں نے مزید کہا کہ انہوں نے ہی پاکستان کو ایٹمی طاقت بنایا۔ مسلم لیگ (ن) کے سپریمو نے پی ٹی آئی کے سربراہ سے کہا کہ وہ کسی ایک منصوبے کا نام بتائیں جس کا انہوں نے تصور کیا اور مکمل کیا۔ پی ٹی آئی نے صرف کے پی کے میں ’ناقص‘ میٹرو بنائی جس پر نیب کی تحقیقات جاری ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ القادر ٹرسٹ اور بلین ٹری کے بارے میں تفصیلات سامنے آئیں تو لوگ حیران رہ جائیں گے۔

قبل ازیں برطانیہ کی معروف اشاعت ڈیلی میل نے جمعرات کو پاکستانی وزیر اعظم شہباز شریف سے اپنے خلاف کرپشن کے جھوٹے الزامات پر معافی مانگ لی۔

رپورٹس کے مطابق شریف خاندان پر کرپشن کے الزامات کا دعویٰ کرنے والا آرٹیکل 2019 میں شائع ہوا تھا۔ پبلی کیشن کے وکلاء نے عدالت کو بتایا کہ پبلی کیشن نے مسلم لیگ ن کے صدر اور ان کے داماد عمران خان کے خلاف تمام الزامات واپس لے لیے ہیں۔

اشاعت نے اپنی ویب سائٹ پر ایک وضاحت بھی شیئر کی۔ 14 جولائی 2019 کو شائع ہونے والے ایک مضمون میں جناب شہباز شریف کے بارے میں ایک مضمون جس کا عنوان تھا ‘کیا پاکستانی سیاستدان کا خاندان جو برطانوی سمندر پار امداد کے لیے پوسٹر بوائے بن گیا ہے زلزلہ متاثرین کے لیے فنڈز کی چوری کا مقصد’ 14 جولائی 2019 کو ہم نے پاکستان کے قومی احتساب بیورو کی جانب سے کی جانے والی تحقیقات کی اطلاع دی تھی۔ مسٹر شریف نے تجویز کیا کہ زیر تفتیش رقم میں برطانوی عوامی رقم کی وہ غیر معمولی رقم شامل ہے جو ڈی ایف آئی ڈی گرانٹ امداد میں صوبہ پنجاب کو ادا کی گئی تھی۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں