پنجاب اسمبلی دسمبر میں تحلیل کر دی جائے گی – مسلم لیگ ق

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین اور مسلم لیگ (ق) کے سینئر عہدیداروں نے پنجاب اسمبلی کو رواں ماہ تحلیل کرنے کا اعلان کردیا۔

پی ٹی آئی نے اس سے قبل پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (PDM) کی مخلوط حکومت کو انتخابات کی تاریخ کا اعلان کرنے کے لیے 20 دسمبر کی ڈیڈ لائن دی تھی۔ بصورت دیگر خیبرپختونخوا اور پنجاب اسمبلیاں تحلیل کردی جائیں گی جیسا کہ عمران خان نے گزشتہ ماہ اعلان کیا تھا۔

حکمراں اتحاد، جس نے ابتدا میں پی ٹی آئی کے اقدام کو روکنے کا اعلان کیا تھا، نے اب اپنا موقف بدل لیا ہے اور اپنے حریف کو اسمبلیاں تحلیل کرنے کی ہمت کی ہے۔

پی ٹی آئی کے سربراہ نے بھکر، میانوالی، پاکپتن اور ساہیوال کے قانون سازوں کے ساتھ مشاورتی اجلاس کی صدارت کی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ارکان نے صوبائی اسمبلی تحلیل کرنے کے فیصلے کی توثیق کی۔

ذرائع کے مطابق عمران خان نے قانون سازوں کو بتایا کہ اسمبلی رواں ماہ تحلیل کر دی جائے گی اور 20 دسمبر سے پہلے تحلیل کی تاریخ عام کر دی جائے گی۔

مسلم لیگ ق ایک اہم اتحادی ہے۔ عمران خان نے کہا کہ ہم نے انہیں اپنے فیصلے سے آگاہ کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ق) اسمبلی کی تحلیل کے معاملے پر پی ٹی آئی کے ساتھ ایک پیج پر ہے۔

ہماری سیاست ملک سے بالاتر نہیں ہے۔ اس حکومت نے قومی معیشت کو تباہ کر دیا ہے۔‘‘ پنجاب اسمبلی کے سپیکر سبطین خان نے یہ بھی کہا کہ تمام اراکین صوبائی اسمبلی نے عمران خان کے فیصلے کی تائید کی ہے۔

قبل ازیں قومی اسمبلی کے سپیکر راجہ پرویز اشرف نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے قانون ساز انہیں پیغام دیتے ہیں کہ وہ استعفے قبول نہ کریں۔

پی ٹی آئی کے قانون سازوں نے اپریل میں تحریک عدم اعتماد کے ذریعے عمران خان کی حکومت کے خاتمے کے بعد بڑے پیمانے پر استعفیٰ دے دیا تھا۔ پی ٹی آئی نے دعویٰ کیا ہے کہ اسد قیصر کے استعفے کے بعد اسپیکر کی عدم موجودگی میں سابق ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری نے استعفے منظور کر لیے تھے۔

تاہم، راجہ پرویز اشرف کے سپیکر منتخب ہونے کے بعد، انہوں نے انفرادی طور پر قانون سازوں سے انٹرویو کر کے استعفوں کی تصدیق کرنے کا فیصلہ کیا۔

بعد ازاں پی ٹی آئی ارکان کے استعفوں کو ڈی سیل کر دیا گیا اور راجہ نے ان میں سے صرف 11 کو ہی منظور کیا۔

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے رہنما حسن مرتضیٰ کی رہائش گاہ پر ناشتہ کرنے کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے اسپیکر اشرف نے کہا کہ ایسے حالات بہت سوچ بچار کے متقاضی ہوتے ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ جب تک وہ مطمئن نہیں ہوجاتے استعفیٰ قبول نہیں کریں گے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں