پاکستان روس سے رعایتی تیل نہیں خرید رہا، وزیر خارجہ بلاول بھٹو

وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ پاکستان رعایتی قیمت پر روسی تیل کی “پیچھے یا حاصل نہیں کر رہا”۔

پی بی ایس نیوزہور کو انٹرویو دیتے ہوئے بلاول بھٹو نے کہا کہ پاکستان روس سے کوئی رعایتی توانائی حاصل نہیں کر رہا ہے بلکہ مختلف آپشنز تلاش کر رہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ “پاکستان کا انفراسٹرکچر روسی تیل کے لیے نہیں بنایا گیا، حالانکہ ملک مستقبل میں سستی توانائی پر ملک کے ساتھ منسلک ہو سکتا ہے۔” تاہم، ایف ایم بلاول نے اعتراف کیا کہ پاکستان کو توانائی کے عدم تحفظ کا سامنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم اپنے علاقوں کو وسعت دینے کے لیے مختلف راستے تلاش کر رہے ہیں جہاں سے ہم اپنی توانائی حاصل کر سکتے ہیں۔

https://youtu.be/AG8q3h5f0lQ

گزشتہ ہفتے وزیر مملکت برائے پیٹرولیم مصدق ملک نے اعلان کیا تھا کہ روس نے پاکستان کو رعایتی نرخوں پر خام تیل، پیٹرول اور ڈیزل فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

مصدق ملک کا مزید کہنا تھا کہ موجودہ حکومت روس سے تیل اور گیس کی خریداری پر بات کر رہی ہے اور امید ہے کہ 20 جنوری تک تمام سودوں کی تفصیلات منظر عام پر آ جائیں گی۔

روسی خام تیل

وزیر نے انکشاف کیا کہ انہوں نے ماسکو میں گیس کمپنیوں سے پاکستان کو ایل این جی برآمد کرنے کے لیے بات چیت بھی کی۔

حکومت نے پیٹرول کی قیمتوں میں کمی کردی

وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے جمعرات کی شب پیٹرول کی قیمت میں 10 روپے فی لیٹر کمی کا اعلان کیا۔

وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پیٹرول کی قیمت میں 10 روپے فی لیٹر کمی کی گئی ہے، مٹی کے تیل اور ہائی اسپیڈ ڈیزل کی قیمتوں میں 7 روپے فی لیٹر کمی کی گئی ہے۔

پیٹرولیم کی قیمتوں میں کمی کے بعد پیٹرول کی نئی قیمتیں 214 روپے 80 پیسے فی لیٹر، ہائی اسپیڈ ڈیزل کی قیمت 214 روپے 80 پیسے فی لیٹر ہوگی۔ 227.80 روپے فی لیٹر، لائٹ ڈیزل 169 روپے فی لیٹر اور مٹی کا تیل 10 روپے کم کر دیا گیا۔ 171.83 فی لیٹر

قبل ازیں وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے ان افواہوں کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان کو پہلے سے طے شدہ خطرے کا سامنا نہیں ہے۔

وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے تنقید کرتے ہوئے کہا کہ افواہیں پھیلانا قومی مفاد میں نہیں۔ انہوں نے واضح کیا کہ پاکستان کو پہلے سے طے شدہ خطرے کا سامنا نہیں ہے۔ ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ ملاقاتیں سیاسی عمل کا حصہ ہیں تاہم دوسری طرف سے لچک نہیں دکھائی گئی۔

وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا کہ عمران خان اسمبلیوں سے باہر جانے کے لیے آزاد ہیں، تاہم شرائط پر مذاکرات نہیں ہوسکے۔ انہوں نے اعتراف کیا کہ سیاسی استحکام کے لیے سیاسی استحکام ضروری ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں