پاکستان کرکٹ ٹیم کراچی ٹیسٹ کے پہلے دن 304 رنز تک محدود رہی

پاکستان کرکٹ ٹیم ہفتہ کو کراچی میں پہلے دن انگلینڈ کی شاندار باؤلنگ کا سامنا کرتے ہوئے پہلی اننگز میں 304 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئی۔

مہمان ٹیم پہلے ہی تین میچوں کی ٹیسٹ سیریز میں 2-0 کی برتری حاصل کر چکی ہے۔ پاکستانی ٹیم انگلینڈ کے خلاف تیسرے ٹیسٹ کی پہلی اننگز میں کپتان بابر اعظم کی نصف سنچری کے باوجود 304 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئی۔

کراچی میں کھیلے جارہے سیریز کے تیسرے اور آخری ٹیسٹ میچ میں پاکستان کے کپتان بابر اعظم نے ٹاس جیت کر انگلینڈ کو پہلے بولنگ کی دعوت دی۔

عبداللہ شفیق اور شان مسعود نے اننگز کا آغاز کیا اور سکور کو 18 تک لے گئے لیکن اسی سکور پر عبداللہ کو وکٹوں کے سامنے پیڈ لانے پر جیک لیچ نے آؤٹ کر دیا۔

اپنے کیرئیر کا آخری ٹیسٹ میچ کھیلنے والے سابق ٹیسٹ کپتان اظہر علی شان مسعود کا ساتھ دینے آئے اور دونوں نے مل کر سکور کو 46 تک پہنچا دیا۔30 کے انفرادی سکور پر شان نے ایک غیر ضروری شاٹ کھیلا اور گیند کو کھینچنے کی کوشش کی۔ مارک ووڈ سے دور، لیکن باؤنڈری پر کھڑا رہا۔ جیک لیچ نے انہیں آگے بڑھانے کے لیے ایک آسان کیچ لیا۔

اظہر اور بابر نے قدرے تیز کھیلنے کی حکمت عملی اپنائی اور چھ رنز فی اوور کی اوسط سے 71 رنز کی شراکت قائم کی لیکن کھانے کے وقفے سے چند لمحوں قبل اپنے کیرئیر کا آخری میچ کھیلنے والے اظہر اپنی وکٹ گنوا بیٹھے۔ انہوں نے 45 رنز بنائے۔

سیریز میں اچھی فارم کا مظاہرہ کرنے والے سعود شکیل نے کپتان بابر کے ساتھ مل کر چوتھی وکٹ کے لیے 45 رنز جوڑے لیکن اس مرحلے پر وہ نوجوان اسپنر ریحان کی ایک خوبصورت گیند پر کیچ آؤٹ ہو گئے اور انگلینڈ کے کم عمر ترین ٹیسٹ کرکٹر نے سب کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ کھیل اور بڑے فارمیٹ میں اپنی پہلی وکٹ حاصل کی۔

محمد رضوان ایک بار پھر ناکام رہے اور 19 رنز بنانے کے بعد جو روٹ نے ان کی وکٹ حاصل کی۔

کپتان بابر اعظم نے ٹیسٹ سیریز میں اپنی اچھی فارم کو جاری رکھا اور اچھی بیٹنگ کی تاہم وہ اپنی نصف سنچری مکمل کرنے کے بعد انفرادی طور پر 78 رنز بنانے کے بعد رن آؤٹ ہوگئے۔ پاکستان کو ساتواں نقصان اس وقت اٹھانا پڑا جب تجربہ کار آل راؤنڈر فہیم اشرف 237 کے اسکور پر صرف 4 رنز بنا کر پویلین لوٹ گئے۔

سلمان آغا نے ذمہ داری سے بیٹنگ کرنے کی کوشش کی اور اپنی نصف سنچری مکمل کی لیکن جیک لیچ نے 56 رنز بنا کر ان کی اننگز کا خاتمہ کیا۔ نعمان علی نے 20 رنز بنا کر آغا سلمان کا ساتھ دیا جب کہ ابرار احمد 304 کے مجموعی اسکور پر آؤٹ ہونے والے آخری بلے باز تھے۔

پاکستان کی پوری ٹیم 304 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئی۔

انگلینڈ کی جانب سے جیک لیچ کامیاب بولر رہے جنہوں نے 4، ریحان احمد نے 2 اور اولی رابنسن اور مارک ووڈ نے بالترتیب ایک ایک کھلاڑی کو آؤٹ کیا۔

پاکستانی ٹیم کے 304 رنز پر آؤٹ ہونے کے بعد صرف 14 منٹ کا میچ کھیلا گیا اور 3 اوورز کرائے گئے جہاں پاکستانی نوجوان اسپنر ابرار احمد نے انگلینڈ کی ابتدائی وکٹ حاصل کی۔ زیک کرولی کو ابرار احمد نے ایل بی ڈبلیو کیا۔ پہلے دن کے اختتام پر انگلینڈ نے ایک وکٹ کے نقصان پر 7 رنز بنائے تھے۔

اس سے قبل پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا۔

پاکستان نے میچ کے لیے ٹیم میں چار تبدیلیاں کیں اور زخمی امام الحق کے ساتھ محمد نواز، زاہد محمود اور محمد علی کو بھی باہر رکھا گیا۔

ان کی جگہ شان مسعود، اظہر علی، نعمان علی اور محمد وسیم جونیئر کو فائنل الیون میں شامل کیا گیا ہے۔ وسیم جونیئر نے ٹیسٹ ڈیبیو کیا ہے اور وہ پاکستان کی جانب سے ٹیسٹ میچ کھیلنے والے 253ویں کرکٹر ہیں، انہیں آخری میچ کھیلنے والے تجربہ کار بلے باز اظہر علی نے ٹیسٹ کیپ دی تھی۔

دوسری جانب اس میچ کے لیے انگلینڈ کی ٹیم میں دو تبدیلیاں کی گئی ہیں جس میں ول جیکس کی جگہ ریحان احمد اور جیمز اینڈرسن کی جگہ بین فوکس کو فائنل الیون کا حصہ بنایا گیا ہے۔

ریحان احمد نے 18 سال کی عمر میں ڈیبیو کیا اور انگلینڈ کی جانب سے ڈیبیو کرنے والے کم عمر ترین کھلاڑی بن گئے۔

اظہر علی ریٹائرمنٹ

یاد رہے کہ اظہر علی نے گزشتہ روز ریٹائرمنٹ کا اعلان کیا تھا اور کراچی ٹیسٹ ان کے انٹرنیشنل کیریئر کا آخری میچ ہے۔ 96 میچوں میں 42.49 کی اوسط سے 7,097 رنز کے ساتھ، علی یونس خان (10,099)، جاوید میانداد (8،832)، انضمام الحق (8،829) اور محمد یوسف (7،530) کے بعد پاکستان کے پانچویں سب سے زیادہ ٹیسٹ رنز بنانے والے کھلاڑی ہیں۔ پی سی بی کو

اظہر علی نے 2016 سے 2020 تک دو الگ الگ ادوار میں نو ٹیسٹ میچوں میں پاکستان کی کپتانی بھی کی۔ جب وہ اپنے کیرئیر کا آخری میچ کھیل رہے ہیں تو پی سی بی کے چیئرمین رمیز راجہ نے انہیں خصوصی سووینئر سے نوازا۔

کراچی میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے، دائیں ہاتھ کے بلے باز نے کہا، “ہر چیز کا اپنا وقت ہوتا ہے۔ یہ صحیح وقت ہے، کل میرے کیریئر کا آخری ٹیسٹ ہوگا۔ پاکستان کی نمائندگی کرنا ان کے لیے اعزاز کی بات ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں