صدر مملکت عارف علوی نے پنجاب میں بڑھتے ہوئے سیاسی درجہ حرارت کے درمیان پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان سے ملاقات کی۔

پاکستان کے سب سے بڑے صوبے پنجاب میں جاری سیاسی بحران کے درمیان صدر عارف علوی نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان سے ملاقات کی۔

وزیر اعلیٰ پنجاب چوہدری پرویز الٰہی کے خلاف تحریک عدم اعتماد اور اعتماد کے ووٹ پر صوبائی حکومت اور اپوزیشن کے درمیان غیر یقینی صورتحال برقرار ہے۔

پی ٹی آئی اور پاکستان مسلم لیگ قائد (پی ایم ایل-ق) پنجاب کے وزیر اعلیٰ کے عہدے پر برقرار رہنے کو یقینی بنانے کے لیے تعداد کے حامل ہونے پر پراعتماد ہیں، جب کہ اپوزیشن کا دعویٰ ہے کہ یہ حکمران اتحاد کو پریشان کر سکتا ہے۔

سیاسی درجہ حرارت بڑھتے ہی صدر علوی نے سابق وزیراعظم سے ملاقات کی جس میں انہوں نے وزیر خزانہ اور ریونیو سینیٹر اسحاق ڈار اور دیگر وفاقی وزراء سے ملاقاتیں کیں۔

دونوں رہنماؤں نے آج کے اجلاس میں پی ٹی آئی کی سینئر قیادت اور پارٹی کی اتحادی مسلم لیگ (ق) کی جانب سے کیے گئے فیصلوں پر بھی تبادلہ خیال کیا۔

پنجاب کے وزیر برائے تحفظ ماحولیات و پارلیمانی امور محمد بشارت راجہ نے بتایا کہ دریں اثناء پنجاب اسمبلی کے سپیکر سبطین خان نے موجودہ گورنر کو ہٹانے کے لیے صدر علوی کو خط بھیجا ہے۔

سابق وزیر قانون نے کہا کہ آرٹیکل 101 (3) کے تحت صدر کو گورنر کو ہٹانے کا اختیار ہے۔

وزیر قانون راجہ بشارت نے کہا کہ برطرفی کے لیے لکھے گئے خط میں اسپیکر نے گورنر کے رویے کی بھی شکایت کی ہے۔

“انہوں نے گورنر کے غیر آئینی اقدامات کی بھی نشاندہی کی ہے اور صدر سے درخواست کی ہے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ گورنر مزید غیر آئینی قدم نہ اٹھائیں”۔

وزیراعلیٰ کی ڈی نوٹیفکیشن

قبل ازیں وفاقی وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے کہا تھا کہ گورنر پنجاب بلیغ الرحمان کی جانب سے وزیراعلیٰ پرویز الٰہی کو ڈی ڈی نوٹیفائی کرنے کا نوٹیفکیشن آج جاری کرنے کا امکان ہے۔

پنجاب کے گورنر ہاؤس کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے رانا ثناء اللہ نے کہا کہ پرویز الٰہی اب صوبے کے ایگزیکٹو نہیں رہے کیونکہ انہوں نے گورنر کے کہنے پر اعتماد کا ووٹ نہیں لیا۔

ثناء اللہ نے کہا کہ آئینی طور پر الٰہی اب وزیراعلیٰ کا عہدہ نہیں رکھتے، انہوں نے مزید کہا کہ وفاقی حکومت گورنر کا حکم ملتے ہی نوٹیفکیشن جاری کرے گی۔ وزیر داخلہ نے ایک بار پھر اس بات کا اعادہ کیا کہ کابینہ سے منظوری کے بعد پنجاب میں دو ماہ کے لیے گورنر راج لگایا جا سکتا ہے۔

اب تازہ ترین اطلاعات یہ ہیں کہ وزیر اعظم شہباز شریف نے گورنر پنجاب بلیغ الرحمان کو وزیر اعلیٰ پرویز الٰہی کا نام بتانے سے روک دیا۔

یہ پیشرفت اس وقت سامنے آئی جب مسلم لیگ (ن) کی قانونی ٹیم نے پارٹی کو مشورہ دیا کہ وہ وزیراعلیٰ الٰہی کی نشاندہی کرنے سے گریز کرے کیونکہ اس معاملے کو عدالت میں چیلنج کیا جا سکتا ہے۔ قانونی ٹیم نے گورنر ہاؤس میں ہونے والے اجلاس کے دوران تجاویز پیش کیں۔ اجلاس میں پاکستان مسلم لیگ (ن) کی سینئر قیادت نے شرکت کی۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں