بازار 8:30 بجے اور شادی ہال رات 10 بجے بند ہوتے ہیں، وزیر دفاع خواجہ آصف

وفاقی وزیر دفاع خواجہ آصف نے کہا کہ وفاقی کابینہ نے توانائی کے تحفظ کے منصوبے کی منظوری دے دی، جس کے مطابق تمام مارکیٹیں رات ساڑھے 8 بجے اور شادی ہال رات 10 بجے بند ہوں گے۔

وزیر دفاع خواجہ آصف نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ ملک بھر میں تمام مارکیٹس اور شاپنگ مالز رات ساڑھے 8 بجے اور شادی ہال رات 10 بجے تک بند کر دیے جائیں گے۔

وزیر اعظم شہباز شریف کی زیر صدارت کابینہ کے اجلاس میں کیے گئے فیصلوں کے بارے میں میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیر دفاع خواجہ آصف نے کہا کہ توانائی کے تحفظ کے منصوبے سے پاکستان کو ایک سال میں 8000 سے 9000 میگاواٹ بجلی اور 62 ارب روپے کی بچت میں مدد ملے گی۔

خواجہ آصف نے کہا کہ ’دنیا کے دیگر حصوں میں مارکیٹیں شام 6 بجے تک بند ہو جاتی ہیں لیکن پاکستان میں آدھی رات کے بعد بھی کھلی رہتی ہیں‘۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ وزیر اعظم شہباز شریف نے انرجی بات چیت پلان کے تحت وفاقی حکومت کے زیر انتظام دفاتر میں بجلی کے استعمال میں 30 فیصد کمی کی ہدایت کی تھی۔

انہوں نے مزید کہا کہ وفاقی کابینہ نے دفاتر میں گھر سے کام کے نفاذ سے متعلق رپورٹ پیش کرنے کے لیے کمیٹی تشکیل دینے کی ہدایت کی۔

مزید یہ کہ انہوں نے یہ بھی اعلان کیا کہ وفاقی حکومت اس سال ای بائیکس متعارف کرائے گی۔ وزیر دفاع خواجہ آصف نے کہا کہ حکومت نے متبادل طور پر اسٹریٹ لائٹس استعمال کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس سے ان کا دعویٰ ہے کہ 4 ارب روپے کی بچت ہوگی۔

مزید انکشاف کیا کہ یکم فروری 2023 کے بعد تاپدیپت بلب تیار نہیں کیے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہم ایسا کرکے 22 ارب روپے بچا سکتے ہیں۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ صدر عارف علوی نے وفاقی حکومت کے منصوبے کی حمایت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے تمام صوبوں اور اسٹیک ہولڈرز سے بات کی ہے اور اس پر سب کا موقف ریکارڈ کیا ہے کیونکہ یہ ایک مستقل فیچر ہوگا، جو ملک کے لیے فائدہ مند ہوگا۔

“میں نے صدر علوی سے کہا ہے کہ وہ کے پی اور پنجاب حکومتوں سے توانائی کے تحفظ کے منصوبے پر عمل درآمد کے لیے بات کریں۔

انہوں نے مزید کہا کہ وزارت اطلاعات عوام میں ان نئے اقدامات کے بارے میں آگاہی پھیلانے کے لیے میڈیا مہم چلائے گی۔

توانائی کے تحفظ کے منصوبے کی اہم خصوصیات:

  • بازار 8:30 بجے تک بند ہو جائیں گے۔
  • شادی ہال رات 10 بجے تک بند کر دیے جائیں گے۔
  • تمام سرکاری دفاتر توانائی کی بچت کرنے والے آلات نصب کریں۔
  • 120-130 واٹ کے ناکارہ پنکھوں کے استعمال پر پابندی عائد کی جائے گی۔
  • 1 فروری 2023 سے فلیمنٹ بلب تیار نہیں کیے جائیں گے۔
  • ملک میں الیکٹرانک موٹر بائیکس متعارف کرائی جائیں گی۔
  • مخروطی گیزر کا استعمال ایک سال کے اندر لازمی کیا جائے گا۔
  • گھر سے کام کی پالیسی پر غور کرنے کے لیے کمیٹی تشکیل دی گئی۔
  • ملک بھر کی سٹریٹ لائٹس باری باری جلائی جائیں گی۔
  • الیکٹرانک، سوشل میڈیا پر آگاہی مہم چلائی جائے گی۔

قبل ازیں وزیر اعظم شہباز شریف کی زیر صدارت قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس میں اقتصادی اور سیکیورٹی چیلنجز پر اہم فیصلے کیے گئے۔ فیصلہ کیا گیا کہ غلط معلومات پھیلانے والے سوشل میڈیا اکاؤنٹس کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں