لاہور ہائیکورٹ کی کارروائی: گورنر پنجاب نے پرویز الٰہی کو بطور وزیراعلیٰ ڈی نوٹیفائی کرنے کا حکم واپس لے لیا

پنجاب کے گورنر بلیغ الرحمان نے پنجاب اسمبلی میں 186 ارکان کا اعتماد حاصل کرنے میں کامیاب ہونے کے بعد پرویز الٰہی کو بطور وزیراعلیٰ ڈی نوٹیفائی کرنے کا حکم واپس لے لیا ہے۔

لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس عابد عزیز شیخ، جسٹس چوہدری محمد اقبال، جسٹس طارق سلیم شیخ، جسٹس عاصم حفیظ اور جسٹس مزمل اختر شبیر پر مشتمل پانچ رکنی بینچ نے کیس کی سماعت کی۔

آج کی کارروائی کے دوران الٰہی کے وکیل بیرسٹر علی ظفر نے بنچ کو بتایا کہ ان کے موکل نے پنجاب اسمبلی سے اعتماد کا ووٹ لے لیا ہے۔

گورنر پنجاب کے وکیل نے بھی بنچ کو تصدیق کی کہ وزیراعلیٰ نے اعتماد کا ووٹ لے لیا ہے۔ ری پلے میں لاہور کورٹ کے جج جسٹس عابد نے استفسار کیا کہ کیا گورنر پنجاب اعتماد کے ووٹ سے مطمئن ہیں؟

گورنر کے وکیل نے بینچ پر زور دیا کہ پنجاب اسمبلی کی کارروائی کو عدالتی ریکارڈ کا حصہ بنایا جائے۔

اس موقع پر جسٹس عاصم حفیظ نے یہ بھی استفسار کیا کہ گورنر نے دوسرا نوٹیفکیشن جاری کیا تو کیا صورتحال ہوگی؟

“گورنر کا نوٹیفکیشن قانونی نہیں تھا،” ظفر نے اصرار کیا۔ جس پر جسٹس عابد نے ریمارکس دیے کہ اعتماد کے ووٹ کا معاملہ طے ہو گیا ہے۔

جسٹس شیخ نے استفسار کیا کہ فلور ٹیسٹ مکمل ہو گیا ہے کیا اس کا مطلب ہے کہ معاملہ حل ہو گیا ہے؟

سماعت کے دوران ایک موقع پر جسٹس شیخ نے استفسار کیا کہ عدم اعتماد کے ووٹ کے لیے کتنے دن بہترین ہوں گے؟

ری پلے میں پرویز الٰہی کے وکیل نے کہا کہ گورنر کو کم از کم 14 دن یا سات دن کا نوٹس دینا چاہیے۔

اس پر جسٹس حفیظ نے ریمارکس دیئے کہ چھٹی والے دن بھی اجلاس بلایا جا سکتا ہے۔

جسٹس شیخ نے کہا کہ عدالت نے صرف یہ دیکھنا ہے کہ گورنر کی جانب سے اعتماد کا ووٹ لینے کے لیے دیا گیا وقت درست تھا یا نہیں۔

جس کے بعد سماعت وقفے کے لیے ملتوی کر دی گئی۔

وقفے کے بعد سماعت ایک بار پھر شروع ہوئی، اور گورنر پنجاب کے وکیل نے لاہور ہائیکورٹ کے بینچ کو بتایا کہ ان کے موکل نے وزیراعلیٰ پرویز الٰہی کے اعتماد کے ووٹ کو تسلیم کرتے ہوئے اپنا ڈی نوٹیفکیشن آرڈر واپس لے لیا ہے۔

وکیل نے لاہور ہائی کورٹ بنچ کو بتایا کہ ‘گورنر نے ڈی نوٹیفکیشن آرڈر واپس لے لیا ہے’۔

جسٹس عابد نے ریمارکس سننے کے بعد کہا کہ یہ معاملہ اسمبلی میں حل ہو گیا ہے جو اچھی بات ہے۔ سب کچھ قانون اور آئین کے مطابق ہوا ہے۔

اس دوران جسٹس حفیظ نے ریمارکس دیئے کہ فیصلے میں اضافی نوٹ دیں گے۔

جس کے بعد بنچ نے وزیراعلیٰ الٰہی کی درخواست نمٹا دی۔

یہاں ایک بات یاد رکھیں 23 دسمبر 2022 کو گورنر پنجاب بلیغ الرحمان نے وزیر اعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی کو صوبائی اسمبلی سے اعتماد کا ووٹ لینے میں ناکام ہونے پر ڈی نوٹیفائی کر دیا تھا۔

گورنر نے احکامات جاری کرتے ہوئے کہا کہ چونکہ وزیراعلیٰ نے مقررہ دن اور وقت پر اعتماد کا ووٹ حاصل کرنے سے گریز کیا ہے اس لئے وہ عہدہ چھوڑ دیتے ہیں۔ نوٹیفکیشن میں، گورنر نے ذکر کیا کہ وزیراعلیٰ کو اعتماد کا ووٹ لینے کے حکم کے باوجود، انہوں نے اس پر عمل نہیں کیا۔

نوٹیفکیشن میں کہا گیا کہ گورنر پنجاب کی جانب سے جاری کردہ نوٹیفکیشن میں کہا گیا کہ ‘میں مطمئن ہوں کہ وہ پنجاب اسمبلی کے ارکان کی اکثریت کا اعتماد حاصل نہیں کرتے اور اس لیے فوری طور پر اپنا عہدہ چھوڑ دیتے ہیں’۔

نوٹیفکیشن میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ صوبائی کابینہ تحلیل ہو چکی ہے اور وزیر اعلیٰ اپنے فرائض سرانجام دیتے رہیں گے جب تک کہ کوئی نیا شخص منتخب نہیں ہو جاتا۔

پرویز الٰہی نے لاہور ہائیکورٹ میں استدعا کی:

اس کے اگلے ہی دن پرویز الٰہی پنجاب کے گورنر بلیغ الرحمان کو پنجاب کا وزیراعلیٰ بنانے کے لیے لاہور ہائی کورٹ سے رجوع کرتے ہیں۔

پرویز الٰہی کی نمائندگی کرنے والے وکیل نے لاہور ہائیکورٹ کے بینچ سے استدعا کی کہ گورنر کے ڈی نوٹیفکیشن آرڈر کو کالعدم قرار دینے کے بعد ہدایت دی جائے۔

اس پر لاہور ہائیکورٹ کے جج نے ریمارکس دیئے کہ عدالت معاملات کو بہتر بنانے کے لیے توازن برقرار رکھنا چاہتی ہے۔ جج نے سوال کیا کہ اگر عدالت کو یقین دہانی نہیں کرائی جا رہی تو عبوری ریلیف کیسے ملے گا۔

علی ظفر نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ عدالت حکومت کو تحریک عدم اعتماد لانے کا حکم دے سکتی ہے۔ لاہور ہائیکورٹ کے جج نے آپشن کو مسترد کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ عدالت فریقین کو عبوری ریلیف کا غلط استعمال روکنا چاہتی ہے۔

اپنے وکیل پرویز الٰہی کے توسط سے دائر درخواست میں موقف اختیار کیا گیا کہ گورنر پنجاب نے آئینی تقاضے کو پورا نہیں کیا اور پنجاب اسمبلی کے جاری اجلاس کے دوران اعتماد کا ووٹ لینے کا حکم دیا۔

درخواست میں کہا گیا کہ گورنر کو اسمبلی کا اجلاس بلانے کا اختیار نہیں دیا گیا جب موجودہ اجلاس پہلے ہی سے جاری تھا۔ لاہور ہائیکورٹ نے وزیراعلیٰ پنجاب کے وکیل کو پنجاب اسمبلی تحلیل نہ کرنے کی یقین دہانی کے لیے بیان حلفی جمع کرانے کا حکم دیتے ہوئے سماعت ایک گھنٹے کے لیے ملتوی کر دی۔ بیان حلفی جمع کرانے کے بعد لاہور ہائیکورٹ نے گورنر کا ڈی نوٹیفکیشن آرڈر معطل کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی اور ان کی کابینہ کو بحال کردیا۔

گزشتہ روز لاہور ہائیکورٹ کی کارروائی میں جسٹس عابد عزیز شیخ نے بدھ کو ریمارکس دیئے کہ گورنر وزیراعلیٰ کو اسمبلی سے اعتماد کا ووٹ لینے کا کہہ سکتے ہیں۔

آج کی کارروائی کے دوران پرویز الٰہی کے وکیل بیرسٹر علی ظفر نے کہا کہ گورنر وزیراعلیٰ سے اعتماد کا ووٹ لینے کا نہیں کہہ سکتے کیونکہ ان کے حقوق محدود ہیں۔

اس پر جسٹس عاصم حفیظ نے ریمارکس دیئے کہ گورنر وزیراعلیٰ سے اسمبلی سے اعتماد کا ووٹ لینے کا کہہ سکتے ہیں۔

وزیر اعلیٰ کو ہمیشہ 186 ارکان کی حمایت حاصل ہونی چاہیے۔

جسٹس عابد عزیز شیخ نے ریمارکس دیئے کہ ابھی تک اعتماد کے ووٹ کا مسئلہ حل نہیں ہوا۔

گورنر کے وکلاء نے کہا کہ ’’یہ مسئلہ صرف اس وقت حل ہو گا جب وزیر اعلیٰ پرویز الٰہی اعتماد کا ووٹ لیں گے،‘‘ انہوں نے مزید کہا کہ الٰہی کے پاس پچھلی سماعت کے بعد اعتماد کا ووٹ لینے کے لیے کافی وقت تھا لیکن انہوں نے ایسا نہیں کیا۔

جس کے بعد عدالت نے سماعت جمعرات تک ملتوی کر دی۔

پنجاب اسمبلی کا اجلاس:

گزشتہ روز لاہور ہائی کورٹ کی کارروائی کے بعد پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) اور اس کے اتحادیوں کے ایک حیران کن اقدام میں وزیراعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی نے صوبائی اسمبلی سے اعتماد کا ووٹ حاصل کرنے کا فیصلہ کیا۔

پنجاب اسمبلی کا اجلاس سپیکر سبطین خان کی زیر صدارت ہوا۔ ذرائع کے مطابق پی ٹی آئی حکومت نے حیران کن اقدام کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی کے لیے اعتماد کا ووٹ لینے کا فیصلہ کیا ہے۔

پی ٹی آئی کے نائب صدر فواد چوہدری نے ٹوئٹر پیغام میں کہا کہ تحریک انصاف اور اس کے اتحادیوں نے اعتماد کے ووٹ سے قبل پنجاب اسمبلی میں 187 ارکان اسمبلی کی تعداد مکمل کر لی۔

پرویز الٰہی کا اعتماد کا ووٹ:

ڈرامائی سیشن کے بعد آخرکار اعتماد کا ووٹ سیشن ہوا۔ پنجاب اسمبلی کے سپیکر سبطین خان کی زیر صدارت اجلاس ہوا جس میں پی ٹی آئی رہنما اور رکن پنجاب اسمبلی میاں اسلم اقبال نے وزیراعلیٰ پر اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے قرارداد پیش کی۔

سپیکر پنجاب اسمبلی سبطین خان نے اعلان کیا کہ وزیراعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی نے کامیابی سے اعتماد کا ووٹ لے لیا۔ پرویز الٰہی نے ایک بار پھر پنجاب اسمبلی میں اعتماد کا ووٹ حاصل کر لیا۔

صوبائی اسمبلی میں وزیراعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی پر اعتماد کے اظہار کے لیے ووٹنگ کا عمل اختتام پذیر ہوگیا۔ وزیراعلیٰ پرویز الٰہی نے 186 ایم پی ایز سے اعتماد کا ووٹ لیا۔ سپیکر پنجاب اسمبلی سبطین خان نے اعلان کیا کہ وزیراعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی نے کامیابی سے اعتماد کا ووٹ لے لیا۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما اور سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری نے کہا ہے کہ کسی بھی قانونی رکاوٹ کے بغیر کل پنجاب اور خیبرپختونخوا اسمبلیوں کی تحلیل متوقع ہے۔

وزیراعلیٰ پرویز الٰہی کی جانب سے اعتماد کے ووٹ کے کامیاب ہونے کے بعد لاہور میں میڈیا سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ پنجاب کو مطلوبہ 186 ووٹ ملے۔

اسمبلی کی کارروائی کے بائیکاٹ پر مسلم لیگ ن کے رہنماؤں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے انہوں نے کہا کہ انہیں اعتماد کے ووٹ کی کارروائی میں حصہ لینا چاہیے تھا لیکن انہوں نے بھاگنے کا انتخاب کیا۔

50% LikesVS
50% Dislikes

Author

  • Muhammad Amir

    Muhammad Amir is working with Burj News as Senior Writer

    https://urdu.burjnews.com/author/mamirsalarzai/ mamirsalarzai@urdu.burjnews.com Amir Muhammad

اپنا تبصرہ بھیجیں