کراچی اور حیدرآباد بلدیاتی انتخابات میں پیپلز پارٹی کو برتری حاصل ہے۔

کراچی اور حیدرآباد ڈویژن میں بلدیاتی انتخابات کے نتائج پولنگ ختم ہونے میں 15 گھنٹے بعد بھی تاخیر کا شکار ہیں۔

سندھ میں بلدیاتی انتخابات کے دوسرے مرحلے میں کراچی اور حیدرآباد ڈویژن کے 16 اضلاع میں گزشتہ روز ہونے والے بلدیاتی انتخابات کے نتائج تاحال نہیں آئے۔ اطلاعات کے مطابق ووٹوں کی گنتی ابھی جاری ہے۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کے واضح احکامات کے باوجود آج صبح تک نتائج کا عمل مکمل نہیں ہوسکا۔ کراچی کی کل 246 نشستوں میں سے پیر کی صبح تک صرف 20 نشستوں کے غیر حتمی اور غیر سرکاری نتائج سامنے آئے ہیں۔

کراچی میں جماعت اسلامی، پاکستان تحریک انصاف اور پاکستان پیپلز پارٹی کے درمیان سخت مقابلہ دیکھنے کو ملا۔ حیدرآباد اور بدین کے اضلاع میں پیپلز پارٹی کو برتری حاصل ہے۔ تاہم مجموعی طور پر ٹرن آؤٹ بہت کم رہا۔ کراچی کے وسطی اور مشرقی اضلاع سے جماعت اسلامی کے مزید امیدوار کامیاب ہوئے۔

سندھ کے بلدیاتی انتخابات

غیر سرکاری اور غیر مصدقہ اطلاعات کے مطابق ملیر اور جنوبی اضلاع لیاری اور کیماڑی میں سندھ کی حکمران جماعت پی پی پی کامیاب رہی۔

غیر سرکاری نتائج

کراچی: یوسیز کے اب تک کے مکمل نتائج کے مطابق پاکستان پیپلز پارٹی نے 22 نشستوں پر کامیابی حاصل کی ہے۔ کراچی میں پی ٹی آئی اور جماعت اسلامی نے بالترتیب 11 اور 8 نشستیں حاصل کی ہیں، جب کہ جہاں نتائج آنا ابھی باقی ہیں، جاری گنتی کے مطابق کچھ جگہوں پر پلڑا بھاری ہے، کچھ جگہوں پر تیر نشان زد اور کچھ جگہوں پر یہ جواب نہیں دیا گیا ہے.

حیدرآباد: کل 160 میں سے 94 یونین کمیٹیوں کے نتائج جاری کر دیے گئے۔ غیر سرکاری اور غیر حتمی نتائج کے مطابق پیپلز پارٹی نے 55، پاکستان تحریک انصاف نے 20، آزاد امیدواروں نے تین اور جماعت اسلامی نے ایک نشست حاصل کی۔

سجاول: غیر سرکاری اور غیر مصدقہ اطلاعات کے مطابق پاکستان پیپلز پارٹی نے 20 نشستیں حاصل کی ہیں جب کہ جے یو آئی ف نے ایک نشست حاصل کی ہے۔

بدین: 64 میں سے 38 ٹاؤن کمیٹیوں کے غیر سرکاری نتائج کے مطابق پیپلز پارٹی نے 30، آزاد امیدواروں نے چھ اور گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس نے دو نشستیں حاصل کیں۔

دادو: اطلاعات کے مطابق پیپلز پارٹی نے ٹاؤن کمیٹی کی سات نشستیں حاصل کی ہیں جب کہ دو سیٹوں پر آزاد امیدوار کامیاب رہے۔

جامشورو: غیر سرکاری غیر حتمی نتائج کے مطابق پیپلز پارٹی نے ٹاؤن کمیٹیوں کی 18 نشستیں جیت لیں۔

یہاں ایک بات یاد رہے کہ پیپلز پارٹی کے رہنما مرتضیٰ وہاب نے پہلے ہی دعویٰ کیا تھا کہ کراچی اور حیدرآباد میں بلدیاتی انتخابات کے دوسرے مرحلے میں ان کی جماعت برتری حاصل کر رہی ہے، یہ کہتے ہوئے کہ کراچی کا اگلا میئر ’جیالہ‘ ہوگا۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں