وفاقی حکومت نے ملک بھر میں شیشہ نوشی پر پابندی عائد کر دی۔

وفاقی حکومت نے پاکستان بھر میں شیشہ تمباکو نوشی پر پابندی عائد کر دی۔

تفصیلات کے مطابق ہوٹلوں، ریستورانوں اور عوامی مقامات پر شیشہ کی فروخت پر پابندی ہوگی۔ ملک بھر میں نئے شیشہ کیفے کھولنے، درآمد کرنے اور اجزاء بنانے پر بھی پابندی ہے۔

وزارت صحت کے ذرائع کے مطابق مناسب ترامیم کے ذریعے پابندی پر سختی سے عمل درآمد کیا جائے گا۔ ذرائع نے بتایا کہ ترمیم کے بعد شیشہ پر پابندی کا باضابطہ حکم نامہ جاری کیا جائے گا۔

2016 میں حکومت نے شیشہ میں استعمال ہونے والے تمباکو کی درآمد پر مکمل پابندی عائد کر دی تھی۔

اس سے قبل اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) نے مقامی انتظامیہ کو وفاقی دارالحکومت میں تمام شیشہ کیفے فوری طور پر بند کرنے اور اس حوالے سے رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی تھی۔

یہ ہدایات اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی نے شیشہ کیفے کے خلاف ایک شہری کی شکایت کے جواب میں 11 صفحات پر مشتمل فیصلے میں جاری کیں۔

پولیس اور اینٹی نارکوٹکس فورس (اے این ایف) نے اسلام آباد انتظامیہ کے ساتھ مل کر شیشہ کیفے جیسی تمام جگہوں پر کریک ڈاؤن کرنے کے لیے اپنے وسائل کو متحرک کر دیا ہے۔

یاد رہے کہ شیشہ اور تمباکو صحت کے لیے نقصان دہ ہیں اس نظریے کو مدنظر رکھتے ہوئے IHC نے شیشہ کیفے پر پابندی عائد کرنے کا حکم دیا کیونکہ یہ نوجوان نسل کی صحت کے لیے نقصان دہ ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں