پی ٹی آئی کے ایم این ایز نے استعفے واپس لینے کا فیصلہ کرلیا

قومی اسمبلی کے سپیکر راجہ پرویز اشرف کی جانب سے پی ٹی آئی کے وکلا کے استعفے قبول کرنے کے بعد حیران کن اقدام کرتے ہوئے پی ٹی آئی کی قیادت نے فیصلہ کیا اور باقی 44 ایم این ایز کو استعفے واپس لینے کا حکم دیا۔

پی ٹی آئی کے سیکرٹری جنرل اسد عمر نے پیر کو اعلان کیا کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے 44 ایم این ایز نے اپنے استعفے واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے۔

اسد عمر نے اپنے ٹوئٹ میں کہا کہ پی ٹی آئی سپیکر قومی اسمبلی سے ایک ہی بار میں تمام استعفے منظور کرنے کا مطالبہ کر رہی ہے لیکن مسٹر اشرف ایسا کرنے سے گریزاں رہے کیونکہ انہوں نے قانون سازوں سے ملاقات کے بعد ایک ایک کر کے استعفے منظور کرنے کا اعلان کیا۔

پی ٹی آئی کے سینئر رہنما اسد عمر نے کہا کہ قومی اسمبلی کے سپیکر کو استعفوں کے حوالے سے ای میل بھیج دی گئی ہے اور اگلا قدم ناراض راجہ ریاض کو اپوزیشن لیڈر کے طور پر تبدیل کرنا ہوگا۔

یہاں ایک بات یاد رہے گزشتہ ہفتے قومی اسمبلی کے سپیکر راجہ پرویز اشرف نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے مزید 35 ایم این ایز کے استعفے منظور کر لیے جن کے استعفے منظور کیے جانے کی تعداد 80 ہو گئی ہے۔

ای سی پی نے پی ٹی آئی کے ایم این ایز کو ڈی نوٹیفائیڈ کر دیا۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے جمعہ کو پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے مزید 35 اراکین قومی اسمبلی (ایم این اے) کو ڈی نوٹیفائی کر دیا جب کہ اسپیکر قومی اسمبلی راجہ پرویز اشرف نے آج کے حیران کن اقدام میں مزید 35 استعفے منظور کر لیے۔

ای سی پی کے نوٹیفکیشن کے مطابق قومی اسمبلی کی 31 جنرل اور چار مخصوص نشستیں اب خالی سمجھی گئی ہیں۔

پی ٹی آئی کے ڈی نوٹیفائیڈ وکلاء میں ڈاکٹر حیدر علی خان (NA-2)، سلیم رحمان (NA-3)، صاحبزادہ صبغت اللہ (NA-5)، محبوب شاہ (NA-6)، محمد بشیر خان (NA-7) شامل ہیں۔ جنید اکبر (NA-8)، شیر اکبر خان (NA-9)۔ علی خان جدون (NA-16)، انجینئر عثمان خان تراکئی (NA-19)، مجاہد علی (NA-20)، ارباب عامر ایوب (NA-28)، شیر علی ارباب (NA-30)، شاہد احمد (NA-30) 34، گل داد خان (NA-40)، ساجد خان (NA-42)، محمد اقبال خان (NA-44)، عامر محمود کیانی (NA-61)، سید فیض الحسن (NA-70)، چوہدری شوکت۔ علی بھاب (NA-87)، عمر اسلم خان (NA-93)، امجد علی خان (NA-96)، خرم شہزاد (NA-107) اور دیگر۔

یہ اقدام قومی اسمبلی کے سپیکر راجہ پرویز اشرف کی جانب سے پی ٹی آئی کے مزید 35 ایم این ایز کے استعفے منظور کرنے کے بعد سامنے آیا ہے۔

واضح رہے کہ عمران خان کی جانب سے وزیر اعظم شہباز شریف کے خلاف عدم اعتماد کا ووٹ لانے کے لیے اپنی پارٹی کی قومی اسمبلی میں واپسی کے اعلان کے بعد ایک حیران کن اقدام میں اسپیکر قومی اسمبلی نے تحریک انصاف کو عدم اعتماد لانے سے روکنے کے لیے استعفے منظور کرنا شروع کر دیے۔ وزیر اعظم شہباز شریف کے خلاف اسمبلی میں تحریک عدم اعتماد۔

50% LikesVS
50% Dislikes

Author

  • Muhammad Amir

    Muhammad Amir is working with Burj News as Senior Writer

    https://urdu.burjnews.com/author/mamirsalarzai/ mamirsalarzai@urdu.burjnews.com Amir Muhammad

اپنا تبصرہ بھیجیں