اوگرا نے پیٹرول کی قیمتوں میں اضافے کی افواہوں کی تردید کردی

اوگرا کا مطلب آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی ہے، جو پاکستان میں ایک آزاد ریگولیٹری ادارہ ہے جو تیل اور گیس کے شعبے کو منظم کرتا ہے۔ تنظیم نے پٹرول کی قیمتوں میں اضافے سے متعلق کسی بھی افواہ کی تردید کی ہے جو گزشتہ روز سوشل میڈیا پر گردش کر رہی ہیں۔

اوگرا کے ترجمان نے ایک پریس بیان میں کہا کہ “یہ دیکھا گیا ہے کہ گزشتہ شام سے پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا میں پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں کے بارے میں قیاس آرائیاں کی جارہی ہیں جو گمراہ کن اور غلط ہیں”۔

انہوں نے عوام کو مشورہ دیا کہ وہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کے بارے میں قیاس آرائیوں اور بے بنیاد خبروں کو پھیلانے سے گریز کریں۔

گزشتہ روز کچھ افواہیں گردش کر رہی ہیں کہ اوگرا نے پیٹرول کی قیمت میں 310 روپے فی لیٹر اضافے کی تجویز دی ہے یہ خبر اس وقت سامنے آئی جب ڈالر 1 روپے 50 پیسے تک پہنچ گیا۔ 266. 83.5 روپے کے اضافے کے بعد، نئی قیمت روپے 310 لیٹر ہوگی۔

جنوری کے شروع میں ملک میں پیٹرول کی قلت کے حوالے سے کچھ افواہیں گردش کر رہی ہیں، آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی (اوگرا) نے ملک میں ڈیزل اور پیٹرول کی قلت کی خبروں کی تردید کرتے ہوئے کہا تھا کہ وافر ذخیرہ موجود ہے۔

اوگرا کے ترجمان عمران غزنوی نے ایک پریس بیان میں واضح کیا کہ ’’ملک بھر میں پٹرول اور ڈیزل کا وافر ذخیرہ موجود ہے۔

انہوں نے کہا کہ ملک میں بالترتیب 18 اور 37 دنوں کی ضروریات پوری کرنے کے لیے پٹرول اور ڈیزل کا کافی ذخیرہ ہے۔ “مزید برآں، 101,000MT [میٹرک ٹن] پیٹرول لے جانے والے جہاز برتھ/بیرونی لنگر انداز ہیں،” ترجمان نے مزید کہا۔

یہ پیش رفت آئل کمپنیز ایڈوائزری کونسل (OCAC) کی جانب سے وفاقی حکومت سے کہا گیا تھا کہ وہ ملک میں ایندھن کی قلت سے بچنے کے لیے پیٹرولیم مصنوعات کی درآمد کے لیے فوری طور پر لیٹر آف کریڈٹ کے اجرا کو یقینی بنائے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

Author

  • Muhammad Amir

    Muhammad Amir is working with Burj News as Senior Writer

    https://urdu.burjnews.com/author/mamirsalarzai/ mamirsalarzai@urdu.burjnews.com Amir Muhammad

اپنا تبصرہ بھیجیں