پاکستان بیل آؤٹ پیکج کے حوالے سے آئی ایم ایف سے معاہدہ کرنے میں ناکام رہا۔

پاکستان توسیعی فنڈ سہولت (ای ایف ایف) پروگرام کے آئی ایم ایف بیل آؤٹ پیکج کے حوالے سے معاہدے کے عملے کی سطح تک پہنچنے میں ناکام رہا۔

پاکستان اس وقت IMF کے وفد کے ساتھ بات چیت کر رہا ہے جو 30 جنوری 2023 کو اسلام آباد پہنچا تھا تاکہ 7 بلین ڈالر کے توسیعی فنڈ سہولت (EFF) کے تعطل کا شکار نویں جائزہ پر تبادلہ خیال کیا جا سکے۔

تازہ ترین تفصیلات کے مطابق بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے مذاکرات کے اختتام کے بعد میمورنڈم آف اکنامک اینڈ فنانشل پالیسیز (ایم ای ایف پی) پاکستان کے حوالے کر دیا تاہم ابھی تک عملے کی سطح کے معاہدے پر دستخط نہیں ہوسکے ہیں۔

پاکستان اور آئی ایم ایف نے مختلف اقتصادی شعبوں اور شعبوں پر بات چیت کے بعد اپنے مذاکرات مکمل کر لیے ہیں۔

سیکرٹری خزانہ حامد یعقوب شیخ نے تصدیق کی کہ آئی ایم ایف نے اقتصادی اور مالیاتی پالیسیوں کی یادداشت (ایم ای ایف پی) پاکستان کے حوالے کر دی ہے۔ شیخ نے کہا کہ پاکستان اور آئی ایم ایف نے ابھی تک عملے کی سطح کے معاہدے پر دستخط نہیں کیے ہیں کیونکہ کچھ معاملات طے ہونے والے ہیں جنہیں واشنگٹن میں حتمی شکل دی جائے گی۔

حامد یعقوب شیخ نے کہا کہ دونوں فریقین نے اقدامات اور پیشگی اقدامات پر اتفاق کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ آئی ایم ایف مشن نے نویں جائزے کے لیے عملے کی سطح کے معاہدے پر دستخط کرنے کے لیے مزید وقت مانگا ہے جس پر آئی ایم ایف واشنگٹن ہیڈ کوارٹر سے منظوری ملنے کے بعد دستخط کیے جائیں گے۔

سیکرٹری خزانہ نے کہا کہ آئی ایم ایف مشن واشنگٹن کے صدر دفتر سے اعلامیہ کی منظوری کا انتظار کر رہا ہے جو حالیہ مذاکرات کا جائزہ لینے کے بعد بیان جاری کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف کے مندوبین جمعہ کی صبح پاکستان سے روانہ ہوں گے۔

اس ہفتے کے شروع میں بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (IMF) نے سرکاری دفاتر اور محکموں میں مالیاتی بے ضابطگی اور بدانتظامی پر عدم اطمینان کا اظہار کیا تھا۔

آئی ایم ایف اکثر مالی مشکلات کا سامنا کرنے والے ممالک کو مدد فراہم کرتا ہے اور حکومتوں کو مشورہ دے سکتا ہے کہ مالی استحکام کو بحال کرنے اور اقتصادی ترقی کو فروغ دینے کے لیے اپنے مالیاتی انتظام کے طریقوں کو کیسے بہتر بنایا جائے۔ ذرائع کے مطابق آئی ایم ایف نے سرکاری اداروں میں مسلسل خسارے پر عدم اطمینان کا اظہار کیا ہے۔

آئی ایم ایف نے نشاندہی کی کہ “بجلی اور گیس کی ترسیل کے نقصانات میں بہتری کا فقدان ہے۔” آئی ایم ایف کے وفد نے مشاہدہ کیا کہ پاکستان توانائی کے شعبے میں مسلسل نقصانات برداشت کر رہا ہے۔ “اس نے نقصان اٹھانے والے ریاستی اداروں کی نجکاری پر اصرار کیا،” ذرائع نے بتایا۔

کچھ معتبر ذرائع کا دعویٰ ہے کہ “آئی ایم ایف حکومتی اداروں میں بدعنوان طریقوں اور ری ٹیپس کو ختم کرنے اور کاروبار دوست اور آسان ٹیکس وصولی کے طریقہ کار کا بھی مطالبہ کر رہا ہے”۔

قرض دینے والے ادارے نے بلوکی اور حویلی بہادر شاہ ایل این جی پاور پلانٹس کی نجکاری، خسارے میں چلنے والے سرکاری بینکوں، ہاؤس بلڈنگ فنانس کارپوریشن اور دیگر سرکاری اداروں کی نجکاری کا مطالبہ کیا ہے۔

ذرائع کا دعویٰ ہے کہ اگر آئی ایم ایف اس بات کا تعین کرتا ہے کہ حکومت درست مالیاتی طریقوں پر عمل نہیں کر رہی ہے تو وہ اپنی حمایت میں تاخیر یا واپس لے سکتی ہے۔

مشکل وقت
وزیر اعظم شہباز شریف نے پشاور میں ایک ایپکس کمیٹی کی صدارت کرتے ہوئے کہا کہ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) پاکستان کو 7 ارب ڈالر کے تعطل کا شکار قرضہ پروگرام کھولنے کے لیے “ٹف ٹائم” دے رہا ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ جیسا کہ ہم سب جانتے ہیں کہ آئی ایم ایف کا وفد تعطل کا شکار قرضہ پروگرام پر بات چیت کرنے اور وزیر خزانہ اور ان کی ٹیم کو بہت مشکل وقت دینے کے لیے اسلام آباد میں ہے۔

وزیر اعظم نے کہا، “ہماری معاشی صورتحال ناقابل تصور ہے” انہوں نے مزید کہا “آپ سب جانتے ہیں کہ ہمارے پاس وسائل کی کمی ہے،” شریف نے کہا، “پاکستان اس وقت ایک ایسے معاشی بحران کا سامنا کر رہا ہے جس کا تصور بھی نہیں کیا جا سکتا۔”

اثاثوں کا اعلان
بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے پاکستان سے سرکاری ملازمین کے اثاثوں کے اعلان سے متعلق اپنے قوانین میں ترمیم کا مطالبہ کردیا۔

فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے ذرائع کے مطابق، آئی ایم ایف نے سرکاری ملازمین کے اثاثوں کا اعلان کرنے کی درخواست کی۔ نہ صرف یہ بلکہ آئی ایم ایف نے بیوروکریسی کے بیرون ملک اثاثوں کی تفصیلات بھی مانگی ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف نے سرکاری افسران کے اثاثے پبلک کرنے کا بھی مطالبہ کیا ہے۔ آئی ایم ایف نے شفافیت کے لیے الیکٹرانک اثاثوں کے اعلان کا نظام قائم کرنے کی تجویز پیش کی۔

ذرائع نے بتایا کہ بینک اکاؤنٹ کھولنے سے پہلے بیوروکریٹس کے اثاثوں کی جانچ پڑتال کی جائے گی۔ بیوروکریٹس کے اکاؤنٹس کھولنے کے لیے بینک ایف بی آر سے معلومات حاصل کریں گے۔

“تمام 17 سے 22 گریڈ کے افسران کو بینک اکاؤنٹ کھولنے سے پہلے تمام معلومات فراہم کرنی ہوتی ہیں،” ذرائع نے بتایا۔

واضح رہے کہ آئی ایم ایف نے پاکستان سے بات چیت کے دوسرے دور میں تقریباً 600 سے 800 ارب روپے کے اضافی ٹیکس عائد کرنے کو کہا تھا تاکہ مہینوں سے رکی ہوئی 7 ارب ڈالر کی توسیعی فنڈ سہولت (ای ایف ایف) کو بحال کیا جا سکے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

Author

  • Muhammad Amir

    Muhammad Amir is working with Burj News as Senior Writer

    https://urdu.burjnews.com/author/mamirsalarzai/ mamirsalarzai@urdu.burjnews.com Amir Muhammad

اپنا تبصرہ بھیجیں