عمران خان کے الزامات میں کوئی صداقت نہیں، امریکی محکمہ خارجہ

امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ وہ عمران خان کے الزامات پر کوئی تبصرہ نہیں کریں گے۔

نیڈ پرائس نے کہا کہ ہم مسلسل یہ دعویٰ کر رہے ہیں کہ عمران خان کے الزامات میں کوئی صداقت نہیں ہے۔

“جب سے یہ غلط الزامات سامنے آئے ہیں ہم نے اس بارے میں واضح طور پر بات کی ہے۔ ہم نے مسلسل کہا ہے کہ ان الزامات میں کوئی صداقت نہیں ہے،‘‘ انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا۔

امریکہ پاکستان کے ساتھ اپنے دیرینہ تعلقات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔ “ہم پاکستان کے ساتھ اپنے دیرینہ تعاون کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔ ہم نے ہمیشہ ایک خوشحال اور جمہوری پاکستان کو اپنے مفادات کے لیے اہم سمجھا ہے۔ ہم پروپیگنڈے، غلط معلومات، غلط معلومات کو کسی بھی دو طرفہ تعلقات کی راہ میں حائل نہیں ہونے دیں گے،” محکمہ خارجہ کے ترجمان نے اپنی روزانہ کی نیوز کانفرنس میں صحافیوں کو بتایا۔

“بلاشبہ اس میں پاکستان کے ساتھ ہمارے قابل قدر دو طرفہ تعلقات شامل ہیں۔ پاکستان کے اندر مختلف سیاسی کھلاڑیوں کی بات کی جائے تو ہمارے پاس ایک سیاسی امیدوار یا پارٹی کے مقابلے میں دوسری پوزیشن نہیں ہے۔ ہم حمایت کرتے ہیں، جیسا کہ ہم دنیا بھر میں کرتے ہیں، جمہوری، آئینی اور قانونی اصولوں کی پرامن برقراری کی،” پرائس نے کہا۔

پاکستانی دفاعی وفد امریکی حکام سے بات چیت کے لیے واشنگٹن میں ہے۔ “میں اس پوزیشن میں ہوں کہ عوامی طور پر اس حقیقت سے بالاتر ہوں کہ پاکستان امریکہ کا قابل قدر شراکت دار ہے۔ اس کی قدر بہت سے دائروں میں ہوتی ہے،” پرائس نے کہا۔

“یقیناً، ہمارا ایک سیکورٹی رشتہ ہے جو ہمارے لیے یہ جان کر اہم ہے کہ پاکستان کو درپیش بہت سے خطرات ہمارے لیے خطرہ بن سکتے ہیں۔ اور اس لیے ہم اس کام کی قدر کرتے ہیں جو ہم مل کر کرتے ہیں، لیکن میں اس سے آگے کچھ پیش کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہوں،” ترجمان نے کہا۔

ہندوستان میں بی بی سی کے دفاتر پر چھاپے کے بارے میں ایک پاکستانی نجی میڈیا چینل کے اسکرائب کے سوال کا جواب دیتے ہوئے، یو ایس ڈی پی ٹی کے ترجمان نے کہا کہ “ہمیں دہلی میں بی بی سی کے دفاتر کی تلاشی کے بارے میں علم ہے۔”

امریکہ پوری دنیا میں، اس ملک میں، ہندوستان میں، اور دنیا بھر میں ہماری ہم وطن جمہوریتوں میں آزاد صحافت کی اہمیت کی حمایت کرتا ہے،‘‘ نیڈ پرائس نے کہا۔

کوئی امریکی سازش نہیں۔
اس سے قبل 12 فروری کو سابق وزیراعظم اور پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ عمران خان نے کہا تھا کہ ان کی حکومت کو ہٹانے کی کوئی امریکی سازش نہیں ہے۔

چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان نے کہا کہ امریکا سپر پاور اور ہمارا سب سے بڑا تجارتی پارٹنر ہے، جو باتیں سامنے آرہی ہیں ان سے واضح ہے کہ مجھے نکالنے میں امریکا کا کوئی ہاتھ نہیں تھا، وزیراعظم کے عہدے سے ہٹانے کا منصوبہ تھا۔ یہاں سے امریکہ کو برآمد کیا جاتا ہے۔ پاکستان کے عوام کے مفاد میں امریکہ کے ساتھ اچھے تعلقات ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی تعلقات ذاتی انا کی بنیاد پر نہیں ہونے چاہئیں، ہمیں ماضی کو چھوڑ کر آگے بڑھنا ہو گا۔ سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان ہمیشہ افغانستان کے ساتھ اچھے تعلقات کا خواہاں ہے، اپنے دور میں افغان حکومت کے ساتھ اچھے تعلقات قائم کرنے کی پوری کوشش کی، تاہم وزیر خارجہ بلاول بھٹو نے افغانستان کا دورہ نہیں کیا۔

پی ٹی آئی کے سربراہ نے دعویٰ کیا کہ سابق آرمی چیف (سی او اے ایس) جنرل ریٹائرڈ قمر جاوید باجوہ نے ان کی حکومت گرانے کا اعتراف کیا۔ انہوں نے کہا کہ جنرل (ر) باجوہ کے ساتھ ہمارے اچھے تعلقات تھے، ہم نے مل کر کام کیا اور پاکستان کورونا وائرس سے نمٹنے میں کامیاب رہا۔ جنرل (ر) باجوہ نے کرپشن کو بڑا مسئلہ نہیں سمجھا۔ موجودہ وزیراعظم شہباز شریف سے ان کے قریبی تعلقات تھے۔

عمران خان نے کہا کہ پی ڈی ایم حکومت انہیں دوبارہ اقتدار میں آنے سے روکنے کے لیے تمام حربے استعمال کر رہی ہے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ نواز شریف نااہل قرار دے کر انہیں جیل بھیجنے کے ہتھکنڈے استعمال کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ وہ سابق آرمی چیف کے اپنی حکومت گرانے کا اعتراف کرنے پر حیران ہیں۔ عمران خان نے کہا کہ سابق آرمی چیف باجوہ اعلیٰ اختیارات کے حامل ’سپر کنگ‘ تھے اور وہ کسی کو جوابدہ نہیں تھے۔

پی ٹی آئی کے سربراہ نے الزام لگایا کہ سابق سی او ایس قومی احتساب بیورو (نیب) کو بھی کنٹرول کر رہے تھے لیکن اس وقت کے وزیر اعظم ہر قسم کی تنقید برداشت کر رہے تھے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں