آئی ایم ایف کی شرائط: حکومت نے پیٹرول کی قیمت میں 22 روپے فی لیٹر اضافہ کردیا۔

وفاقی حکومت نے ‘منی بجٹ‘ پیش کرنے کے بعد بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے 7 بلین ڈالر کی توسیعی فنڈ سہولت (ای ایف ایف) کو بحال کرنے کے لیے پیٹرول کی قیمت 22.20 روپے فی لیٹر تک بڑھا دی ہے۔

تفصیلات کے مطابق فنانس ڈویژن کی جانب سے پریس ریلیز جاری کی گئی جس میں بتایا گیا کہ پیٹرول کی قیمت 249 روپے 80 پیسے فی لیٹر سے بڑھا کر 272 روپے فی لیٹر کر دی گئی۔ نئی قیمتوں کا اطلاق آج رات 12 بجے سے ہوگا۔

بیان میں کہا گیا کہ پیٹرول کی قیمت 22 روپے اضافے کے بعد 272 روپے فی لیٹر ہوگئی، اس بات کی نشاندہی کرتے ہوئے کہ یہ اضافہ ڈالر کے مقابلے روپے کی قدر میں کمی کے باعث ہوا ہے۔

اس دوران ہائی اسپیڈ ڈیزل (ایچ ایس ڈی) کی قیمت 17 روپے 20 پیسے فی لیٹر اضافے سے 280 روپے ہوگئی۔ مٹی کے تیل کی قیمت میں 12 روپے 30 پیسے کا اضافہ کیا گیا ہے جس کے بعد مٹی کے تیل کی نئی قیمت 202 روپے 73 پیسے فی لیٹر ہوگئی ہے۔ اسی طرح لائٹ ڈیزل کی قیمت 9 روپے 68 پیسے اضافے سے 196 روپے 68 پیسے فی لیٹر ہوگئی۔

پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ قرضہ پروگرام کو بحال کرنے کے لیے آئی ایم ایف کی پیشگی شرائط میں سے ایک تھا، جس سے پہلے سے ہی ریکارڈ شدہ مہنگائی میں اضافہ ہوگا، اس کے ساتھ ساتھ ‘منی’ کے ذریعے کیے گئے نئے مالیاتی اقدامات بھی۔ بجٹ’

‘منی بجٹ’
قبل ازیں وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے مالیاتی بل (ضمنی) ’’منی بجٹ‘‘ قومی اسمبلی میں پیش کیا تاکہ ڈیفالٹ سے بچنے کے لیے درکار قرضہ پروگرام کی منظوری کے لیے آئی ایم ایف کی شرائط کو پورا کیا جا سکے۔

پارلیمنٹ سے خطاب کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے ن لیگ اور پی ٹی آئی کی سابقہ حکومتوں کی کارکردگی کا موازنہ کیا۔

وزیر خزانہ نے جنرل سیلز ٹیکس جی ایس ٹی کی شرح 17 سے بڑھا کر 18 فیصد کرنے اور سگریٹ اور تمباکو پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی (ایف ای ڈی) میں اضافے کا بھی اعلان کیا تاکہ پاکستان کی جانب سے 170 ارب روپے میں سے 115 ارب روپے اضافی حاصل کیے جا سکیں۔ آئی ایم ایف کی شرائط۔

چھوٹے بجٹ کی تجاویز

  • حکومت نے لگژری آئٹمز پر جی ایس ٹی 17 فیصد سے بڑھا کر 25 فیصد کر دیا
  • سگریٹ اور فزی ڈرنکس پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی میں اضافہ۔
  • سیمنٹ پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی میں اضافہ
  • جی ایس ٹی 17 فیصد سے بڑھا کر 18 فیصد کر دیا گیا ہے۔
  • بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام (BISP) کے ہینڈ آؤٹ 360 ارب روپے سے بڑھ کر 400 ارب روپے ہو گئے
  • بزنس اور فرسٹ کلاس ہوائی ٹکٹوں پر ایف ڈی ای اب 20,000 روپے یا 50% ہوگی – جو بھی زیادہ ہو
  • ضروری اشیاء پر جی ایس ٹی نہیں لگایا جانا ہے۔

وزارت خزانہ کے معتبر ذرائع نے بتایا کہ وہ توقع کرتے ہیں کہ بل جمعرات کی صبح تک چڑھ جائے گا، جس سے نہ صرف آئی ایم ایف کی رقم بلکہ کثیر الجہتی اور دو طرفہ فنڈز کی راہ ہموار ہوگی۔

تازہ ترین تفصیلات کے مطابق بل کو ایوان بالا میں پیش کرنے کے لیے سینیٹ کا اجلاس بھی طلب کر لیا گیا ہے۔ دونوں ایوانوں سے فنانس بل کی منظوری کے بعد بل کو منظوری کے لیے صدر مملکت عارف علوی کو بھیجا جائے گا۔

آئی ایم ایف ورچوئل مذاکرات
بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) اور پاکستان کے درمیان 7 بلین ڈالر کے قرض پروگرام کے نویں جائزے کی تکمیل کے لیے ورچوئل مذاکرات فنانس بل پیش کرنے سے ایک روز قبل شروع ہوئے۔

وزارت خزانہ کے حکام آئی ایم ایف کو قرضہ پروگرام کی بحالی کے لیے ان کی جانب سے رکھی گئی شرائط پر عملدرآمد کے بارے میں بریفنگ دیں گے۔ یہ اطلاع دی گئی کہ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) اور پاکستان 7 بلین ڈالر کی توسیعی فنڈ سہولت (ای ایف ایف) کی بحالی کے قریب پہنچ گئے ہیں کیونکہ آئی ایم ایف نے اقتصادی اور مالیاتی پالیسیوں کی یادداشت (ایم ای ایف پی) کے مسودے کا جواب دیا اور جلد ہی $7 کی بحالی اربوں کی توسیعی فنڈ سہولت (EFF) مکمل کی جائے گی۔

50% LikesVS
50% Dislikes

Author

  • Muhammad Amir

    Muhammad Amir is working with Burj News as Senior Writer

    https://urdu.burjnews.com/author/mamirsalarzai/ mamirsalarzai@urdu.burjnews.com Amir Muhammad

اپنا تبصرہ بھیجیں