معمولی سی ٹریفک خلاف ورزی پر 4 کروڑ روپے کا جرمانہ

شمالی یورپی ملک فن لینڈ میں ایک گاڑی کے ڈرائیور پر تیز رفتار ڈرائیونگ کے جرم میں 1 لاکھ 21 ہزار یورو (3 کروڑ 66 لاکھ 85 ہزار پاکستانی روپے) جرمانہ عائد کر دیا گیا۔

ملزم آندرس وکلوف پچاس کلومیٹر کی حد رفتار والے زون میں 82 کلو میٹرکی رفتار سے گاڑی چلا رہا تھا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ملزم ایک امیر شہری ہے اور یہ پہلا موقع نہیں ہے کہ اسے بہت بھاری جرمانہ کیا گیا ہے۔

گزشتہ ایک دہائی کے دوران اسی ڈرائیور کو 3 مرتبہ اوور اسپیڈنگ کی وجہ سے بھاری جرمانہ کیا جا چکا ہے تاہم یہ پہلا موقع ہے کہ جرمانے کی رقم 1 لاکھ یورو کی حد بھی پار کر گئی۔

اسکینڈے نیویا کی جمہوریت اور یورپی یونین کے رکن ملک فن لینڈ میں ٹریفک قوانین کی خاص بات یہ ہے کہ وہاں مقررہ حد سے زیادہ رفتار سے ڈرائیونگ کرنے والے افراد کو جرمانہ ان کی سالانہ آمدنی کے مطابق کیا جاتا ہے۔

پولیس نے بھاری جرمانے کے علاوہ 10 روز کے لیے ملزم کا ڈرائیونگ لائسنس بھی معطل کر دیا ہے۔

آندرس وکلوف ایک ایسی ہولڈنگ کمپنی کا سربراہ ہے، جو مال برداری، ہیلی کاپٹر سروسز، پراپرٹی کی خرید و فروخت، تجارت اور سیاحت سمیت کئی شعبوں میں متعدد کاروباری اداروں کی مالک ہے۔

اس کے بارے میں یہ بھی مشہور ہے کہ وہ جزائر آلینڈ کا امیر ترین باشندہ ہے۔

ایک مقامی اخبار کی رپورٹ کے مطابق آندرس وِکلوف کو اس سے قبل سنہ 2018 میں 63 ہزار 680 یورو (1 کروڑ 93 لاکھ پاکستانی روپے) کا جرمانہ کیا جاچکا ہے، جبکہ سنہ 2015 میں 95 ہزار یورو (2 کروڑ 88 لاکھ پاکستانی روپے) جرمانہ کیا جاچکا ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں