صدر مملکت نے سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر بل بغیر دستخط کیے واپس بھیج دیا

صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے “سپریم کورٹ پریکٹس اینڈ پروسیجر بل 2023″ پر دستخط کیے بغیر پارلیمنٹ کو واپس بھیج دیا۔ اس کا مطلب ہے کہ پارلیمنٹ بل پر کام شروع کر سکتی ہے، لیکن صدر اس میں کوئی تبدیلی نہیں کر سکتے۔

صدر علوی کا کہنا ہے کہ سپریم کورٹ اس معاملے کی سماعت کر رہی ہے کہ آیا یہ بل درست ہے، اس لیے ہم ابھی اس پر مزید کارروائی نہیں کر سکتے۔

دوسری جانب سپریم کورٹ نے بل پر حکم امتناعی جاری کیا ہوا ہے۔سپریم کورٹ نے اپنے حکم نامے میں کہا ہے کہ صدر بل پر دستخط کریں یا نہ کریں دونوں صورتوں میں بل نافذ العمل نہیں ہوگا۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں