سراج الحق نے سپریم کورٹ میں الیکشن سے متعلق اہم تجویز پیش کی

اسلامی سیاسی جماعت امیر جماعت اسلامی کے نمائندے سراج الحق جس دن الیکشن ہونا تھا اس دن عدالت میں پیش ہوئے اور مشورہ دیا کہ الیکشن کو عید کے بعد تک ملتوی کرنا بہتر ہوگا۔

سراج الحق نے کہا کہ پاکستان میں سیاسی اور معاشی بحران ہے اور اس سے غریب عوام کا حال مزید خراب ہو رہا ہے۔ اس بحران سے آئینی بحران پیدا ہو رہا ہے اور اس کے عوام پر بہت منفی اثرات مرتب ہو رہے ہیں۔

سپیکر نے کہا کہ پاکستان میں موجودہ مسائل کو الیکشن کے بغیر حل کرنے کا کوئی راستہ نہیں۔ الیکشن صرف دو اہم سیاسی جماعتوں کے لیے نہیں بلکہ ملک کی تمام سیاسی جماعتوں کے لیے ہے۔ مرکز میں نگران حکومت قائم ہونی چاہیے اور صوبوں کو یہ فیصلہ ہونا چاہیے کہ اس کی قیادت کون کرے گا۔ حج پر جانے والے لاکھوں پاکستانی عازمین کو ووٹ سے محروم نہ کیا جائے۔

امیر جماعت اسلامی نے کہا کہ آئین متاثر ہوا تو قوم کی آئندہ نسلیں معاف نہیں کریں گی، حکومت اور اپوزیشن لڑ پڑے جس کے نتیجے میں 10 سال مارشل لا بھگتا، سیاسی جماعتیں آپس میں مذاکرات کرے اور ایک تاریخ پر متفق ہوں، ہم الیکشن میں حصہ لینا چاہتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ امید ہے تمام سیاسی جماعتیں کسی بات پر متفق ہو جائیں گے، الیکشن کی تاریخ پر تمام سیاسی جماعتوں کو متفق ہونا چاہیے، سیاست ذاتی دشمنی میں بدل گئی ہے، وزیراعظم اور عمران خان سے ملاقات کی دونوں میں لچک محسوس کی۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں