سیاسی بحران کی وجہ سے پاکستان غذائی قلت کا شکار ہوسکتا ہے، اقوام متحدہ کی رپورٹ

 اقوام متحدہ نے پاکستان میں غذائی قلت کا خدشہ ظاہر کردیا ہے، جس کی وجہ ملک میں جاری سیاسی بحران کو قرار دیا گیا ہے۔

فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن اور ورلڈ فوڈ پروگرام کی جانب سے جاری ہونیوالی رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ پاکستان میں 8.5 ملین سے زائد افراد کو ستمبر اور دسمبر 2023 کے درمیان شدید غذائی عدم تحفظ کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے ، پاکستان، وسطی افریقی جمہوریہ، ایتھوپیا، کینیا، کانگو اور شامی عرب جمہوریہ کے تشویش ناک حد تک خوراک کی کمی کے شکار ہونے کے دائرے میں ہیں، لوگوں کی خوراک اور دیگر ضروری اشیاء خریدنے کی سکت ختم ہوتی جا رہی ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پاکستان میں سیاسی انتشار اور آئی ایم ایف کے بیل آؤٹ پیکیج میں مسلسل تاخیر کی وجہ سےفوڈ سیکیورٹی کی صورتحال انتہائی خراب ہوتی جارہی ہے۔

رپورٹ کے مطابق  اگر پاکستان میں معاشی و سیاسی بحران اور سرحدی علاقوں میں سیکیورٹی کی صورتحال بدستور خراب ہوتی رہی تو کوئلے اور خوراک کی برآمدات میں بھی کمی واقع ہوسکتی ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں